Monday, 3 October 2016

اَج دی رات


اَج دی رات اخیر، وے رانجھن
قصہ بن جاؤُ ہیر

ڈھاواں مارن گئے ہُن بیلے
کھیہ اُڈاون گے اوہ ویلے
جنھاں دے اوہلے اِک مِک ہوئی
میری تیری تقدیر، وے رانجھن
اَج دی رات اخیر

جاندیاں گھڑیاں ڈنگ دیاں جاون
آونیاں گھڑیاں اُڈدِیاں آون
جاندیاں آوندیاں گھڑیاں مِل کے
ڈنگ گھتّی تدبیر، وے رانجھن
اَج دی رات اَخیر

آخری واری درد ونڈا لَے
ہیر سے پیار نُوں ہِک نال لا لَے
دِن چڑھدے تائیں کِھلر جاسی
ساہواں دی زنجیر، وے رانجھن
اَج دی رات اخیر​

یا الہی، مرگِ یوسف کی خبر سچی نہ ہو


اب نہیں ہوتیں دعائیں مستجاب
اب کسی ابجد سے زندانِ ستم کھلتے نہیں
سبز سجادوں پہ بیٹھی بیبیوں نے
جس قدر حرف عبادت یاد تھے
پو پھٹے تک انگلیوں پہ گن لیے
اور دیکھا رحل کے نیچے لہو ہے
شیشۂ محفوظ کی مٹی ہے سرخ
سطر مستحکم کے اندر بست و در باقی نہیں
ایلچی کیسے بلاد مصر سے
سوئے کنعاں آئے ہیں
اک جلوس بے تماشہ گلیوں بازاروں میں ہے
یا الہی، مرگِ یوسف کی خبر سچی نہ ہو

۔۔۔۔

اب سمیٹو مشک و عنبر
ڈھانپ دو لوح و قلم
اشک پونچھو اور ردائیں نوک پا تک کھینچ لو
کچی آنکھوں سے جنازے دیکھنا اچھا نہیں

میرے ہم نشیں


















میں تیری سانسوں کی تاروں میں ہوں
آسماں پر چمکتے ہوئے سب ستاروں میں ہوں
میں ۔ ۔ ۔ سمندر کی ہر اک لہر میں
ترے گزرے ہر پہر میں ہوں
تری آنکھ میں تیرتی سب گلابی
مرے نام کی ہے
ترے لہجے کی سب تھکن
میری ہی یاد کی ہے ‘‘
مرے ہم نشیں
تُو یہ کہتا ہے
’بن تیرے ہر سانس گھائل ہے
پر کیا کروں
بیچ میں زمانہ یہ حائل ہے‘‘
اے ہم نشیں سچ بتا
کیا ترا دل بھی قائل ہے
کہ بیچ اپنے زمانہ ہی حائل ہے؟

دکھوں کی تفصیل لکھنے بیٹھوں تو اشک اپنے تمام لکھوں



Sunday, 2 October 2016

paanch'waan mausom

















Mein us ka paanch'waan mausom

Usay tab yaad aauun ga


Keh jab kuch bhi nhi ho ga


Na koi rang ka mausom


Na rasm e sang ka mausom


Rahay ga yaad ka mausom


Dil e barbaad ka mausom


Usay tab yaad aauun ga


Bohat he yaad aaun ga !

پانچواں موسم













میں اس کا پانچواں موسم

اسے تب یاد آؤں گا

کہ جب کچھ بھی نہیں ہوگا

نہ کوئی رنگ کا موسم

نہ رسم سنگ کا موسم

رہے گا یاد کا موسم

دل برباد کا موسم

اسے تب یاد آؤں گا

بہت ہی یاد آؤں گا
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets