Monday, 8 May 2017














Milay kab thay hum kisi morr per Na usay khabar Na mujhay khabar,
Keh khayal-o-khwaab ka tha saafr Na usay khabar Na mujhay khabar.

Na wo aas men Na gumaan men Na salam tha Na payaam tha,
Kisay kis nay dekha tha chonk kar Na usay khabar Na mujhay khabar.

Dar-e-dil pey naram si dastaken kisay roktay kisay tok'tay, 
Wo mehak thi jaan men gaii utar Na usay khabar Na mujhay khabar.

Kabh us kay seenay men mera dil Bara naatwaan Bara muzmahil,
Meray rukh pey us ki hy chashm'e tar Na usay khabar Na mujhay khabar. 

Dil'e muztarib rahen kab talak kisi bey khabar kay khayaal men,
Kisay dhoondtay rahen umr bhar Na usy khabar Na mujhay khabar.

Kabhi kho gaye sabhi raastay kabhi raaston say palat gaye,
Kahan us ka ghar kahan mera ghar Na usay khabar Na mujhay khabar.

Thay nazar men ajnabi raastay to yeh kaisay aa gaya yak'ba'yak, 
Sar-e-raah chahaton ka nagar Na usay khabar Na mujhay khabar..

Tuesday, 2 May 2017

Ishq hamara paisha thehra aashiquee apni zaat huii
















Aaj hamari aankhon say phir ashkon ki barsaat huii
Ghir aayee phir say taareeki jeeven men phir raat huii

Hum ko to jis jis nay dekha bola pagal deewana
Ishq hamara paisha thehra aashiquee apni zaat huii


Bikhri teray pyar ki khushbu joon'he hum nay mondi aankhen
Hotay hotay neend hamari yaadon ki baraat huii

Hum say bhi rakhtay ho rishta fikr bhi tum ko auron ki
Chaahat men bhi duniya'daari khud socho kaya baat huii

Sapnay jeetay aankhen haareen dil jeeta aur dharkan haaray
Baazi apnay haath men thi par man'marzi say maat huii

Daal diye darya men ghoray aag laga di kashti ko
Haath men jis kay suraj qismat us kay saath huii

Monday, 13 March 2017

Usay Bhula Kay Bhi Yaadon Kay Silsilay Na Gaye


















Usay Bhula Kay Bhi Yaadon Kay Silsilay Na Gaye,
Dil-e-Tabah Teray Un Say Raabtay Na Gaye,

Kitab-e-zeest Kay Unwaan Badal Gaye Lekin,
Nisaab-e-Jaan Say kabhi Uss kay Tazkaray Na Gaye,

Main Chand Aur Sitaaron Kay Geet Gaata Raha,
Aur Meray He Ghar Say Andheron Kay Qafilay Na Gaye.

Thursday, 2 March 2017

سلگ رہا ہے محبت کی آگ ميں وه شخص




















بلا کی دهوپ ميں بهی نخل سايہ دار ہوں ميں
زميں پہ تيری محبت کا اعتبار ہوں ميں

سلگ رہا ہے محبت کی آگ ميں وه شخص
اور اس پہ گرتی ہوئی کوئی آبشار ہوں ميں

تمہارے ہاته سے نکلوں تو بے کس و مجبور
تمہارے ہاته ميں آؤں تو اختيار ہوں ميں

ميں بچنے آئی تهی ليکن بچا رہی ہوں تجهے
تيرے حصار ميں تهی اب تيرا حصار ہوں ميں

پهر اُس کے بعد تو افسوس کا سفر ہے دوست
کہ زندگی ميں تيری صرف ايک بار ہوں ميں

مجهے ہجوم ميں بدلا ہے تيری يادوں نے
کی ايک ہو کے بهی لگتا ہے بے شمار ہوں ميں

تمہيں يقين قمؔر کس ليے ہے دنيا کا
تمہيں تو ميرا پتہ تها وفا شعار ہوں ميں

Sunday, 26 February 2017

موسم شاعری
















خيال و خواب ہُوا برگ و بار کا موسم
بچهڑ گيا تری ُصورت٬ بہار کا موسم

کئی ُرتوں سے مرے نيم وا دريچوں ميں
ڻهہر گيا ہے ترے انتظار کا موسم

وه نرم لہجے ميں کچه تو کہے کہ لَوٹ آئے
سماعتوں کی زميں پر پهوار کا موسم

پيام آيا ہے پهر ايک سرو قامت کا
مرے وجود کو کهينچے ہے دار کا موسم

وه آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے
مرے بدن کو ِملا ہے چنار کا موسم

رفاقتوں کے نئے خواب ُخوش نما ہيں ٬مگر
گُزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

َہوا چلی تو نئی بارشيں بهی ساته آئيں
زميں کے چہرے پہ آيا نکهار کا موسم

وه ميرا نام ليے جائے اور ميں اُس کا نام
لہو ميں گُونج رہا ہے پکار کا موسم

قدم رکهے مری ُخوشبو کہ گهر کو لَوٹ آئے
کوئی بتائے ُمجهے کوئے يار کا موسم

وه روز آ کے مجهے اپنا پيار پہنائے
مرا غرور ہے بيلے کے ہار کا موسم

ترے طريِق محبت پہ با رہا سوچا
يہ جبر تها کہ ترے اختيار کا موسم

پروين شاکر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ِفراق يار کی بارش ملال کا موسم
ہمارے شہر ميں اترا کمال کا موسم

وه اک دعا جو ميری نامراد لوٹ آئی
زباں سے روڻه گيا پهر سوال کا موسم

بہت دنوں سے ميرے ذہن کے دريچوں ميں
ڻهہر گيا ہے تمہارے خيال کا موسم

جو بے يقيں ہوں بہاريں اجڑ بهی سکتی ہيں
تو آ کے ديکه لے ميرے زوال کا موسم

محبتيں بهی تيری دهوپ چهاؤں جيسی ہيں
کبهی يہ ہجر کبهی يہ وصال کا موسم

کوئی ملا ہی نہيں جس کو سونپتے محسن
ہم اپنے خواب کی خوشبو خيال کا موسم

محسن نقوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وه ساته لے گيا قول و قرار کا موسم
تمام عمر ہے اب ِانتظار کاموسم

حيات اب بهی کهڑی ہے اُسی دوراہے پر
وہی ہے جبر٬ وہی ِاختيار کا موسم

ابهی تو ُخود سے ہی فارغ نہيں ہيں اہ ِل جمال
ابهی کہاں د ِل اُميد وار کا موسم

اُسے بهی وعده فراموشی زيب ديتی ہے
ہميں بهی راس نہيں اعتبار کا موسم

جہاں ِگرے گا لُہو٬ پهول بهی ِکهليں گے وہيں
ِکسی کے بس ميں نہيں ہے بہار کا موسم

کبهی تو لوٹ کے ِدلداريوں کی ُرت آئے
سدا بہار ہے ُمدت سے َدار کا موسم

ہم اپنے آپ کو محسن بدل کے ديکهيں گے
بدل سکے نہ اگر ُکوئے يار کا موسم

محسن بهوپالی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روش روش ہے وہی انتظار کا موسم
نہيں ہے کوئی بهی موسم٬ بہار کا موسم

ِ گراں ہے دل پہ غم روزگار کا موسم
ِہے آزمائش حس ِن نگار کا موسم

خوشا نظارۀ رخسارِ يار کی ساعت
خوشا قرارِد ِل بے قرار کا موسم

حديث باده و ساقی نہيں تو کس مصرف
خرام ابرِ سرِ کوہسار کا موسم
ِ
نصيب صحبت ياراں نہيں تو کيا کيجے
يہ رقص سايہء سرو و چنار کا موسم

يہ دل کے داغ تو دکهتے تهی يوں بهی پر کم کم
کچه اب کے اور ہے ہجراِن يار کا موسم

يہی جنوں کا٬ يہی طوق و دار کا موسم
يہی ہے جبر٬ يہی اختيار کا موسم

قفس ہے بس ميں تمہارے٬ تمہارے بس ميں نہيں
چمن ميں آتِش گل کے نکهار کا موسم

صبا کی مست خرامی تِہ کمند نہيں
اسیرِ دام نہيں ہے بہار کا موسم

بلا سے ہم نے نہ ديکها تو اور ديکهيں گے
فروغِ گلشن و صو ِت ہزار کا موسم

فيض احمد فيض
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی موسم ہو دل ميں ہے تمہاری يادکاموسم
کہ بدلا ہی نہيں جاناں تمہارے بعد کاموسم

نہيں تو..آزما کر ديکهہ لو کيسے بدلتا ہے
تمہارے مسکرانے سے دل شاد کا موسم

کہيں سے اس حسين آواز کی خوشبو پکارے گی
تو اس کے ساتهہ بدلے گا دل برباد کا موسم

قفس کے بام و در ميں روشنی سی آئی جاتی ہے
چمن ميں آ گيا شايد لب آزاد کا موسم

ميرے شہر پريشاں ميں تيری بے چاند راتوں ميں
بہت ہی ياد کرتا ہوں تيری بنياد کا موسم

نہ کوئی غم خزاں کا ہے.نہ چاہت ہے بہاروں کی
ہمارے ساتهہ تو ہے امجد کسی کی ياد کا موسم

امجد اسلام امجد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اداس اداس ہے دل کے ديار کا موسم
جبهی مہيب ہے قرب و جوار کا موسم

يونہی عياں نہيں رخ سے نکهار کا موسم
تمہاری زيست ميں رقصاں ہے پيار کا موسم

بہت پسند ہے مجه کو بہار کا موسم
مگر فصيح جو ہے قر ِب يار کا موسم

زمانہ بيت گيا٬ دل کا ايک عالم ہے
بدل گيا مرے قرب و جوار کا موسم

بنام لطف٬ ستم ڈهائيے جہاں تک ہو
کہ دل پہ ہے ابهی صبر و قرار کا موسم

ہميں وفاؤں کی ہمراہياں نصيب ہوئيں
ہمارے ساته رہا اعتبار کا موسم

ڻهہر گيا ہے کہيں قافلہ بہاروں کا
ڻهہر گيا ہے يہاں انتظار کا موسم

خزاں کے زيرِ اثر کب تلک رہے گا چمن
کبهی تو آئے گا اس پر بہار کا موسم

تو صبر و شکر کی کهيتی اگاؤں گا دل ميں
مجهے ملا جو کبهی اختيار کا موسم

سو نقِد جاں ہی انهيں پيش کر ديا ہم نے
ميں قبول نہيں تها ادهار کا موسم

فصيح کيسے بتاؤں ميں اپنے دل کا حال
بيان کيسے ہو اجڑے ديار کا موسم

شاہين فصيح ربانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملا ہے کيسا ترے اعتبار کا موسم
کہ جيسے چاروں طرف ہے بہار کاموسم

اترتی جاتی ہيں کهيتوں ميں ياد کی چڑياں
نکهر رہا ہے مرے سبزه زار کا موسم

کچه ايسے موجِ صبا نے چهوا ہے گالوں کو
کہ دل ميں کهلنے لگا برگ و بار کا موسم

نئی رتوں ميں مليں گے اسی جگہ ہم تم
سنبهال رکهنا مرے يار ٬ پيار کا موسم

نکهرتی دهوپ تهی اجلے تهے ميرے شام و سحر
کہاں سے آيا ہے گرد و غبار کا موسم

ابهی تو اجلا ہے آنگن گلاب تازه ہيں
گزر ہی جائے نہ قول و قرار کا موسم

کچه اور کونپليں پهوڻيں گی ٬ پهول آئيں گے
نيا نيا ہے ابهی شاخسار کا موسم

ہر ايک شاخ پہ چاندی ہے کهل رہی احسان
گلوں پہ آ يا ہے سولہ سنگهار کا موسم

احسان گهمن

Tuesday, 3 January 2017

To Kaya Tum Itni Be'Hiss Ho?



Meray Teemaar'Daaron Say
Maseeha Jab Yeh Keh Dain gay
Dawaa Taaseer Kho Bethi
Dua Ka Waqt Aa Pohancha

Yeh Beemaari Bahana Thi
Qaza Ka Waqt Aa Pohancha
To Kaya Tum Itni Be'Hiss Ho?
Yaqeen Iss Par Na Laao Gi
To Kaya Tum Itni Zaalim Ho
Mujhay Milnay Na Aao Gi ?

Monday, 2 January 2017

نئے برس کا پہلا لمحہ

میرے محبوب 
نئے برس کا پہلا لمحہ دل آنگن میں اتر رہا ہے
میرے ہاتھ میں گزرے برس کی کچھ یادیں تھمی ہیں ...
اور ان یادوں میں میرے اچھے برے کئی پل ہیں 
اور ان لمحوں میں ۔۔۔ 
میرے ان گنت وہم جو دھڑکن کی صورت دھڑک رہے ہیں 
میرے ان گنت اندیشے جو یہاں وہاں بکھرے ہوئے ہیں 
شب کے تیسرے پہر مانگی ہوئی بےشمار دعائیں ہیں 
میری بےشمار امیدیں جو دلاسا بن کر ساتھ رہی ہیں 
اور ۔۔اور۔۔ 
میری ڈھیر ساری تمنائیں جو بےقرار کرتی رہی ہیں 
ان سب سے جڑا ایک نام ہے 
وہ نام تمہارا ہے 
جو میرا سہارا ہے 
سنو
میرے محبوب 
میں نے 
گزرے برس کو وہ سارے گزرے پل واپس کر دئے ہیں
بس ان سے جڑا تمہارا نام پاس رکھ لیا ہے 
یہ سوچ کر دعا کے پلو سے باندھ لیا ہے 
کہ
 ہم نئے برس گزرے برس سے اچھی یادیں بنائیں گے

Naye bars ka pehla lamha


Meary mehboob
Naye bars ka pehla lamha dil aangan men utar raha hai
Meray haath men guzray bars ki kuch yaaden thammi hain...
Aur in yaadon men meray achay buray kaee pal hain
Aur in lamhon men...
Meray an'gint weham jo dharkan ki suurat dharak rahay hain
Meray an'gint andeshay jo yahaan wahaan bikhray huye hain
Shab kay teesray pehar maangi hui be'shumaar duaayen hain
Meri be'shumaar umeedain jo dilaasa ban kar saath rahi hain
Aur..aur...
Meri dhair saari tammanaayen jo be'qaraar karti rahi hain
In sab say jurra aik naam hai
Woh naam tumhara hai
Jo mera sahaara hai
Suno
Meray mehboob
Mein nay
Guzray bars ko woh saaray guzray pal waapis kar diye hain
Bas un say jurra tumhara naam paas rakh liya hai
Yeh soch kar dua kay pallu say baand liya hai
Keh
Hum naye bars guzray bars say achi yaaden banaayen gay
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets