Sunday, 26 February 2017

موسم شاعری
















خيال و خواب ہُوا برگ و بار کا موسم
بچهڑ گيا تری ُصورت٬ بہار کا موسم

کئی ُرتوں سے مرے نيم وا دريچوں ميں
ڻهہر گيا ہے ترے انتظار کا موسم

وه نرم لہجے ميں کچه تو کہے کہ لَوٹ آئے
سماعتوں کی زميں پر پهوار کا موسم

پيام آيا ہے پهر ايک سرو قامت کا
مرے وجود کو کهينچے ہے دار کا موسم

وه آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے
مرے بدن کو ِملا ہے چنار کا موسم

رفاقتوں کے نئے خواب ُخوش نما ہيں ٬مگر
گُزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

َہوا چلی تو نئی بارشيں بهی ساته آئيں
زميں کے چہرے پہ آيا نکهار کا موسم

وه ميرا نام ليے جائے اور ميں اُس کا نام
لہو ميں گُونج رہا ہے پکار کا موسم

قدم رکهے مری ُخوشبو کہ گهر کو لَوٹ آئے
کوئی بتائے ُمجهے کوئے يار کا موسم

وه روز آ کے مجهے اپنا پيار پہنائے
مرا غرور ہے بيلے کے ہار کا موسم

ترے طريِق محبت پہ با رہا سوچا
يہ جبر تها کہ ترے اختيار کا موسم

پروين شاکر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ِفراق يار کی بارش ملال کا موسم
ہمارے شہر ميں اترا کمال کا موسم

وه اک دعا جو ميری نامراد لوٹ آئی
زباں سے روڻه گيا پهر سوال کا موسم

بہت دنوں سے ميرے ذہن کے دريچوں ميں
ڻهہر گيا ہے تمہارے خيال کا موسم

جو بے يقيں ہوں بہاريں اجڑ بهی سکتی ہيں
تو آ کے ديکه لے ميرے زوال کا موسم

محبتيں بهی تيری دهوپ چهاؤں جيسی ہيں
کبهی يہ ہجر کبهی يہ وصال کا موسم

کوئی ملا ہی نہيں جس کو سونپتے محسن
ہم اپنے خواب کی خوشبو خيال کا موسم

محسن نقوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وه ساته لے گيا قول و قرار کا موسم
تمام عمر ہے اب ِانتظار کاموسم

حيات اب بهی کهڑی ہے اُسی دوراہے پر
وہی ہے جبر٬ وہی ِاختيار کا موسم

ابهی تو ُخود سے ہی فارغ نہيں ہيں اہ ِل جمال
ابهی کہاں د ِل اُميد وار کا موسم

اُسے بهی وعده فراموشی زيب ديتی ہے
ہميں بهی راس نہيں اعتبار کا موسم

جہاں ِگرے گا لُہو٬ پهول بهی ِکهليں گے وہيں
ِکسی کے بس ميں نہيں ہے بہار کا موسم

کبهی تو لوٹ کے ِدلداريوں کی ُرت آئے
سدا بہار ہے ُمدت سے َدار کا موسم

ہم اپنے آپ کو محسن بدل کے ديکهيں گے
بدل سکے نہ اگر ُکوئے يار کا موسم

محسن بهوپالی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روش روش ہے وہی انتظار کا موسم
نہيں ہے کوئی بهی موسم٬ بہار کا موسم

ِ گراں ہے دل پہ غم روزگار کا موسم
ِہے آزمائش حس ِن نگار کا موسم

خوشا نظارۀ رخسارِ يار کی ساعت
خوشا قرارِد ِل بے قرار کا موسم

حديث باده و ساقی نہيں تو کس مصرف
خرام ابرِ سرِ کوہسار کا موسم
ِ
نصيب صحبت ياراں نہيں تو کيا کيجے
يہ رقص سايہء سرو و چنار کا موسم

يہ دل کے داغ تو دکهتے تهی يوں بهی پر کم کم
کچه اب کے اور ہے ہجراِن يار کا موسم

يہی جنوں کا٬ يہی طوق و دار کا موسم
يہی ہے جبر٬ يہی اختيار کا موسم

قفس ہے بس ميں تمہارے٬ تمہارے بس ميں نہيں
چمن ميں آتِش گل کے نکهار کا موسم

صبا کی مست خرامی تِہ کمند نہيں
اسیرِ دام نہيں ہے بہار کا موسم

بلا سے ہم نے نہ ديکها تو اور ديکهيں گے
فروغِ گلشن و صو ِت ہزار کا موسم

فيض احمد فيض
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی موسم ہو دل ميں ہے تمہاری يادکاموسم
کہ بدلا ہی نہيں جاناں تمہارے بعد کاموسم

نہيں تو..آزما کر ديکهہ لو کيسے بدلتا ہے
تمہارے مسکرانے سے دل شاد کا موسم

کہيں سے اس حسين آواز کی خوشبو پکارے گی
تو اس کے ساتهہ بدلے گا دل برباد کا موسم

قفس کے بام و در ميں روشنی سی آئی جاتی ہے
چمن ميں آ گيا شايد لب آزاد کا موسم

ميرے شہر پريشاں ميں تيری بے چاند راتوں ميں
بہت ہی ياد کرتا ہوں تيری بنياد کا موسم

نہ کوئی غم خزاں کا ہے.نہ چاہت ہے بہاروں کی
ہمارے ساتهہ تو ہے امجد کسی کی ياد کا موسم

امجد اسلام امجد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اداس اداس ہے دل کے ديار کا موسم
جبهی مہيب ہے قرب و جوار کا موسم

يونہی عياں نہيں رخ سے نکهار کا موسم
تمہاری زيست ميں رقصاں ہے پيار کا موسم

بہت پسند ہے مجه کو بہار کا موسم
مگر فصيح جو ہے قر ِب يار کا موسم

زمانہ بيت گيا٬ دل کا ايک عالم ہے
بدل گيا مرے قرب و جوار کا موسم

بنام لطف٬ ستم ڈهائيے جہاں تک ہو
کہ دل پہ ہے ابهی صبر و قرار کا موسم

ہميں وفاؤں کی ہمراہياں نصيب ہوئيں
ہمارے ساته رہا اعتبار کا موسم

ڻهہر گيا ہے کہيں قافلہ بہاروں کا
ڻهہر گيا ہے يہاں انتظار کا موسم

خزاں کے زيرِ اثر کب تلک رہے گا چمن
کبهی تو آئے گا اس پر بہار کا موسم

تو صبر و شکر کی کهيتی اگاؤں گا دل ميں
مجهے ملا جو کبهی اختيار کا موسم

سو نقِد جاں ہی انهيں پيش کر ديا ہم نے
ميں قبول نہيں تها ادهار کا موسم

فصيح کيسے بتاؤں ميں اپنے دل کا حال
بيان کيسے ہو اجڑے ديار کا موسم

شاہين فصيح ربانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملا ہے کيسا ترے اعتبار کا موسم
کہ جيسے چاروں طرف ہے بہار کاموسم

اترتی جاتی ہيں کهيتوں ميں ياد کی چڑياں
نکهر رہا ہے مرے سبزه زار کا موسم

کچه ايسے موجِ صبا نے چهوا ہے گالوں کو
کہ دل ميں کهلنے لگا برگ و بار کا موسم

نئی رتوں ميں مليں گے اسی جگہ ہم تم
سنبهال رکهنا مرے يار ٬ پيار کا موسم

نکهرتی دهوپ تهی اجلے تهے ميرے شام و سحر
کہاں سے آيا ہے گرد و غبار کا موسم

ابهی تو اجلا ہے آنگن گلاب تازه ہيں
گزر ہی جائے نہ قول و قرار کا موسم

کچه اور کونپليں پهوڻيں گی ٬ پهول آئيں گے
نيا نيا ہے ابهی شاخسار کا موسم

ہر ايک شاخ پہ چاندی ہے کهل رہی احسان
گلوں پہ آ يا ہے سولہ سنگهار کا موسم

احسان گهمن
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets