POETRY (URDU SCRIPT 2)



جہاں بھر میں ہمارے عشق کی تشہیر ہوجائے 

اُسے کس نے کہا تھا دل پہ یوں تحریر ہو جائے 



میں سچا ہوں تو پھر آئے مِری تقدیر ہوجائے 

میں جھوٹا ہوں تو میرے جرم کی تعزیر ہوجائے 



میں اپنے خواب سے کہتا ہوں آنکھوں سے نکل آئے 

ذرا آگے بڑھے اور خواب سے تعبیر






 ہوجائے 



زباں ایسی کہ ہر اک لفظ مرہم سالگے اُس کا

نظر ایسی کہ اُٹھتے ہی دلوں میں تِیر ہو جائے 



وہ ہر پَل جس میں اپنے پیار کی یادیں دھڑکتی ہیں

مِری جاگیر ہو جائے، تجھے زنجیر ہو جائے 



سبب کچھ تو رہا ہوگا ترے حیدر کی حالت کا

کبھی جو بے سبب ہنس دے، کبھی دلگیر ہوجائے 


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خود اپنے ہونٹوں پہ صدیوں کی پیاس رکھتاہے 
وہ   ایک  شخص جو مجھ کو   اُداس رکھتا ہے

نہیں وہ رنگ پہ رنگوں سا عکس ہے  اُس کا
نہیں وہ پھول پہ پھولوں سی باس   رکھتا ہے

     یہ اور بات کہ اِقرار کر  نہیں پاتا    




مگر وہ دل تو محبت شناس رکھتا   ہے

نہیں ہے کوئی بھی اُمید جس کے آنے کی  
دل اُس کے آنے کے سوسو قیاس رکھتاہے

جو تجھ کو ملنے سے پہلے  بچھڑگیا حیدر
تُو کس طرح اُسے پانے کی آس رکھتا ہے 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

اداس لمحوں کے ہونٹوں میں    تازگی بھر دو


بجھے ہوئے مِرے چہرے میں روشنی بھر دو



میں اپنے ''ہونے'' کے احساس سے ہراساں ہوں


مِرے شعور میں کچھ کیفِ بے خودی  بھردو





کنواری رات کے سینے سے کھینچ کر آنچل









اُفق کی زردیوں میں حُسنِ تِیرگی بھردو  





وہ   جب خلوص کی قیمت چُکانے آیا ہے 


تو میرے ذہن  میں بھی رنگِ تاجری بھر دو





چلو پھر آنکھیں   کرو  چار موت سےحیدر


پھر آج  موت کی آنکھوں میں زندگی بھردو

٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


روشنی روشنی سی   ہر سُو   ہے 
یہ ترا   دھیان ہے کہ خود   توُ ہے 


جب  تلک دیکھوں اک گلاب ہے وہ 
اور  چھونے لگوں تو   خوشبو   ہے


ہاتھ     




 آتی   نہیں    دھنک    جیسے 
وہ   بھی   رنگوں   کا   ایک جادُو ہے


اُس نے پتھرا دیا مجھے حیدر
دیکھنے  میں جو آئینہ رو ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


پیاسے    سمندروں   کی   طرح   تَیرتے رہے 

اپنے    مقدّروں    کا    لکھا    سوچتے   رہے 





شب    بھر    اُتارتے   رہے   پلکوں پہ چاندنی

تم  بوند   بوند   روشنی     میں   ڈوبتے  رہے 





جاگے   ہیں میرے ذہن میں جب بھی ترے خیال 

خوابوں   کے  








 شہر   بنتے   رہے،   ٹوٹتے رہے 





خاموشیوں    کے   لب   پہ    کوئی گیت تھا رواں 

گہری    اداسیوں    کے   کنول   جھومتے رہے





رقصاں   تھی   اِس    طرح تری یادوں کی آبشار

کہسار دل کے، جھانجھروں سے گونجتے رہے 





تھی کتنے موسموں کی مہک اُس کے جسم میں 

سانسوں   کی    تیز   آنچ میں ہم بھیگتے رہے 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مِرے   بدن   پہ   ترے   وصل  کے    گلاب    لگے 
یہ میری آنکھوں میں، کس رُت میں کیسے خواب لگے

نہ   پُورا   سوچ   سکوں  ، چھوسکوں  ، نہ پڑھ پاؤں
کبھی  وہ چاند  ، کبھی   گُل، کبھی     کتاب       لگے 

نہیں   ملا    تھا   تو    برسوں   گزر   گئے یوں ہی
پر   اب    تو   اس    کے   ِبنا ہر   گھڑی عذاب لگے

تمہارے ملنے




 کا مل   کر   بھی کب یقیں آیا
یہ سلسلہ ہی محبت    کا   اک سراب  لگے

یہ   میرے جسم   پہ  کیسا خمار چھایا  ہے
تمہارے جسم  میں شامل  مجھے شراب لگے

ہمیں    تو    اچھا     ہی    لگتا  رہے گا وہ حیدر
بلا    سے    ہم    اُسے  اچھے   لگے، خراب لگے

٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


پچھلے سال کی ڈائری کا آخری ورق


کوئی موسم ہو وصل و ہجر کا
ہم یاد رکھتے ہیں
تری باتوں سے اس دل کو
بہت آباد رکھتے ہیں

کبھی دل کے صحیفے پر
تجھے تصویر کرتے ہیں
کبھی پلکوں کی چھاؤں میں
تجھے زنجیر کرتے ہیں
کبھی خوابیدہ شاموں میں
کبھی بارش کی راتوں میں

کوئی موسم ہو وصل و ہجر کا
ہم یاد رکھتے ہیں

تری باتوں سے اس دل کو
بہت آباد رکھتے ہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
کوئی چاند چہرہ کشا ہوا
وہ جو دھند تھی وہ بکھر گئی
وہ جو حبس تھا وہ ہَوا ہُوا
کوئی چاند چہرہ کشا ہوا
تو سمٹ گئی
وہ جو تیرگی تھی چہار سُو
وہ جو برف ٹھہری تھی روبرو
وہ جوبے دلی تھی صدف صدف
وہ جو خاک اڑتی تھی ہر طرف
مگر اک نگاہ سے جل اٹھے
جو چراغ جاں تھے بجھے بجھے 
مگر اک سخن سے مہک اٹھے
مرے گلستاں‘ مرے آئینے
کسی خوش نظر کے حصار میں
کسی خوش قدم کے جوار میں

کوئی چاند چہرا کشا ہوا
مرا سارا باغ ہر ا ہوا

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

یہ سچ ہے ہمیں جھوٹ کی عادت بھی بہت تھی

اس دل میں مگر تیری محبت بھی بہت تھی

کچھ ہاتھ بھی خالی تھے کہ ہم لے نہیں پائے
کچھ آپ کی بازار میں قیمت بھی بہت تھی

منزل سے ذرا پہلے وہ چھوڑ گیا یوں
کم حوصلہ راہی تھا ، مسافت بھی بہت تھی


اس دم تیرے کھو جانے کا کچھ غم بھی نہیں ہے
اُس وقت تجھے پانے کی حسرت بھی بہت تھی


اُس کو بھی بچھڑنے کا بہت رنج ہوا ہے
میرے لیے اُس کی یہ وضاحت بھی بہت تھی


سنتے ہیں میرے اپنے ہی تھے قتل میں شامل
کہتے ہیں انہیں اس پہ ندامت بھی بہت تھی

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خمار غم ہے ، مہکتي فضا ميں جيتے ہيں 
تيرے خيال کي آب و ہوا ميں جيتے ہيں 

بڑے اتفاق سے ملتے ہيں ملنے والے مجھے 
وہ ميرے دوست ہيں ، تيري وفا ميں جيتے ہيں 

فراق يار ميں سانسوں کو روک کے رکھتے ہيں 
ہر ايک لمحہ گزرتي قضا ميں جيتے ہيں 

نا بات پوري ہوئي تھي ،کھ رات ٹوٹ گئي 
ادھورے خواب کي آدھي سزا ميں جيتے ہيں 

تمھاري باتوں ميں کوئي مسيحا بستا ہے 
حسين لبوں سے برستي شفا ميں جيتے ہيں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
وہ آنکھیں کیسی آنکھیں ہیں؟ 
وہ آنکھیں کیسی آنکھیں ہیں 
جنھیں اب تم چاہا کرتے ہو! 
تم کہتے تھے 
مری آنکھیں، اِتنی اچھی، اِتنی سچی ہیں 
اس حُسن اور سچائی کے سوا، دُنیا میں کوئی چیز نہیں 
کیا اُن آنکھوں کو دیکھ کے بھی 
تم فیض کا مصرعہ پڑھتے ہو؟ 
تم کہتے تھے 
مری آنکھوں کی نیلاہٹ اتنی گہری ہے 
’’مری روح اگر اِک بار اُتر جائے تو اس کی پور پور نیلم ہوجائے‘‘ 
مُجھے اتنا بتاؤ 
آج تمھاری رُوح کا رنگ پیراہن کیا ہے 
کیا وہ آنکھیں بھی سمندر ہیں؟ 
یہ کالی بھوری آنکھیں 
جن کو دیکھ کے تم کہتے تھے 
’’یوں لگتا ہے شام نے رات کے ہونٹ پہ اپنے ہونٹ رکھے ہیں‘‘ 
کیا اُن آنکھوں




 کے رنگ میں بھی،یوں دونوں وقت مِلاکرتے ہیں؟ 
کیا سُورج ڈُوبنے کا لمحہ،اُن آنکھوں میں بھی ٹھہرگیا 
یا وہاں فقط مہتاب ترشتے رہتے ہیں؟ 
مری پلکیں 
جن کو دیکھ کے تم کہتے تھے 
اِن کی چھاؤں تمھارے جسم پہ اپنی شبنم پھیلادے 
تو گُزر تے خواب کے موسم لوٹ آئیں 
کیا وہ پلکیں بھی ایسی ہیں 
جنھیں دیکھ کے نیند آجاتی ہو؟ 
تم کہتے تھے 
مری آنکھیں یُونہی اچھی ہیں 
’’ہاں کاجل کی دُھندلائی ہُوئی تحریر بھی ہو__تو 
بات بہت دلکش ہوگی!‘‘ 
وہ آنکھیں بھی سنگھار تو کرتی ہوں گی 
کیا اُن کا کاجل خُود ہی مِٹ جاتا ہے؟ 
کبھی یہ بھی ہُوا 
کِسی لمحے تم سے رُوٹھ کے وہ آنکھیں رودیں 
اور تم نے اپنے ہاتھ سے اُن کے آنسو خُشک کیے 
پھر جُھک کر اُن کوچُوم لیا 
(کیا اُن کو بھی!!) 


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭





بعد مُدت اُسے دیکھا، لوگو

وہ ذرا بھی نہیں بدلا، لوگو


خُوش نہ تھا مُجھ سے بچھڑ کر وہ بھی

اُس کے چہرے پہ لکھا تھا،لوگو


اُس کی آنکھیں بھی کہے دیتی تھیں

رات بھر وہ بھی نہ سویا،لوگو


اجنبی بن








 کے جو گزرا ہے ابھی


تھا کِسی وقت میں اپنا ،لوگو


دوست تو خیر کوئی کس کا ہے

اُس نے دشمن بھی نہ سمجھا،لوگو


رات وہ دردمرے دل میں اُٹھا

صبح تک چین نہ آیا ،لوگو


پیاس صحراؤں کی پھر تیز ہُوئی

اَبر پھر ٹوٹ کے برسا،لوگو 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
  اُداس شام دریچوں میں مُسکراتی ہے
                  ہَوا بھی‘دھیمے سُروں میں،کوئی اُداس گیت
                  مرے قریب سے گُزرے تو گنگناتی ہے
                  مری طرح سے شفق بھی کسی کی سوچ میں ہے
                  میں اپنے کمرے میں کھڑکی کے پاس بیٹھی ہوں
                  مری نگاہ دھندلکوں میں اُلجھی جاتی ہے
                  نہ رنگ ہے،نہ کرن ہے،نہ روشنی، نہ چراغ
                  نہ تیراذکر، نہ تیرا پتہ، نہ تیرا سُراغ
                 




 ہَوا سے ،خشک کتابوں کے اُڑرہے ہیں ورق
                  مگرمیں بُھول چُکی ہُوں تمام ان کے سبق
                  اُبھر رہا ہے تخیلُ میں بس ترا چہرہ
                  میں اپنی پلکیں جھپکتی ہوں اُس کو دیکھتی ہوں
                  میں اس کو دیکھتی ہوں اور ڈر کے سوچتی ہوں
                  کہ کل یہ چہرہ کسی اور ہاتھ میں پہنچے
                  تو میرے ہاتھوں کی لکھی ہُوئی کوئی تحریر
                  جو اِن خطوط میں روشن ہے آگ کی مانند
                  نہ ان ذہین نگاہوں کی زد میں آجائے 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 اپنی رسوائی، ترے نام کا چرچا دیکھوں
                  اِک ذرا شعر کہوں اور میں کیا کیا دیکھوں

                  نیند آجائے تو کیا محفلیں برپا دیکھوں
                  آنکھ کُھل جائے تو تنہائی کا صحرادیکھوں

                  شام بھی ہوگئی،دُھند لاگئیں آنکھیں بھی مری
                  بُھولنے والے،میں کب تک ترارَستا دیکھوں

                  ایک اِک کرکے مجھے چھوڑ گئیں سب سکھیاں
                  آج میں خُود کو تری یاد میں تنہا دیکھوں

                  کاش صندل سے مری مانگ اُجالے آکر
                  اتنے غیروں میں وہی ہاتھ ،جو اپنا دیکھوں

                  تو مرا کُچھ نہیں لگتاہے مگر جانِ حیات!
                  جانے کیوں تیرے لیے دل کو دھڑکتا دیکھوں!

                  بند کرکے مِری آنکھیں 

  وہ شرارت سے ہنسے
                  بُوجھے جانے کا میںہر روز تماشہ دیکھوں

                  سب ضِدیں اُس کی مِیں پوری کروں ،ہر بات سُنوں
                  ایک بچے کی طرح سے اُسے ہنستا دیکھوں

                  مُجھ پہ چھا جائے وہ برسات کی خوشبو کی طرح
                  انگ انگ اپنا اسی رُت میں مہکتا دیکھوں

                  پُھول کی طرح مرے جسم کا ہر لب کِھل جائے
                  پنکھڑی پنکھڑی اُن ہونٹوں کا سایا دیکھوں

                  میں نے جس لمحے کو پُوجا ہے،اُسے بس اِک بار
                  اب بن کر تری آنکھوں میں اُترتا دیکھوں

                  تو مری طرح سے یکتا ہے، مگر میرے حبیب!
                  میں آتا ہے، کوئی اور بھی تجھ سا دیکھوں

                  ٹُوٹ جائیں کہ پگھل جائیں مرے کچے گھڑے
                  تجھ کو میں دیکھوں کہ یہ آگ کا دریا دیکھوں 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
چارہ گر، ہارگیا ہو جیسے
اب تو مرنا ہی دَوا ہو جیسے

مُجھ سے بچھڑا تھا وہ پہلے بھی مگر
اب کے یہ زخم نیا ہو جیسے

میرے ماتھے پہ ترے
  پیار کا ہاتھ
رُوح پر دست صبا ہو جیسے

یوں بہت ہنس کے ملا تھا لیکن
دل ہی دل میں وہ خفا ہو جیسے

سر چھپائیں تو بدن کھلتا ہے
زیست مفلس کی رِدا ہو جیسے 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

اک شخص کی چاہت کا ارمان رہا اکثر
جو جان کر بھی سب کچھ انجان رہا اکثر

یہ پیار محبت کا ہے کھیل ، دوست کیسا
کی جس نے وفا اس کو نقصان رہا اکثر

آتا ہے وہ نیندوں میں، رہتا ہے وہ خوابوں میں
اک یہ ہی تو اس کا مجھ پہ احسان رہا اکثر

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
ہوتی ہے تیرے نام سے وحشت کبھی کبھی
برہم ہوئی ہے یوں بھی طبیعت کبھی کبھی

اے دل کسے نصیب یہ توفیقِ اضطراب
ملتی ہے زندگی میں یہ راحت کبھی کبھی

تیرے کرم سے اے اَلمِ حُسن آفریں
دل بن گیا ہے دوست کی خلوت کبھی کبھی

جوشِ جنوں میں درد کی طغیانیوں کے ساتھ
اشکوں میں ڈھل گئی تری صورت کبھی کبھی

تیرے قریب رہ کے بھی دل مطمئن نہ تھا
گزری ہے مجھ پہ یہ بھی قیامت کبھی کبھی

کچھ اپنا ہوش تھا نہ تمھارا خیال تھا
یوں بھی گزر گئ شبِ فُرقت کبھی کبھی

اے دوست ہم نے ترکِ محبّت کے باوجود
محسوس کی ہے تیری ضرورت کبھی کبھی


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
جو بھی قاصد تھا وہ غیروں کے گھروں تک پہنچا
کوئی نامہ نہ ترے در بدروں تک پہنچا

مجھ کو مٹی کیا تو نے تو یہ احسان بھی کر
کہ مری خاک کو اب کوزہ گروں تک پہنچا

اے خدا! ساری مسافت تھی رفاقت کیلئے
مجھ کو منزل کی جگہ ہمسفروں تک پہنچا

تو مہ و مہر لئے ہے مگر اے دستِ کریم
کوئی جگنو بھی نہ تاریک گھروں تک پہنچا

دل بڑی چیز تھا بازارِ محبت میں کبھی
اب یہ سودا بھی مری جان ، سروں تک پہنچا

اتنے ناصح ملے رستے میں کہ توبہ توبہ
بڑی مشکل سے میں شوریدہ سروں تک پہنچا

اہلِ دنیا نے تجھی کو نہیں لوٹا ہے فراز
جو بھی تھا صاحبِ دل ، مفت بروں تک پہنچا

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
کڑی تھی دھوپ اور بے سائباں وہ کر گیا مجھ کو
بھری دنیا تھی لیکن بے جہاں وہ کر گیا مجھ کو

کہاں کے رنج دے کر نیم جاں وہ کر گیا مجھ کو
کہ خود میرے لیے ہی رائیگاں وہ کر گیا مجھ کو

ضرورت تھی جہاں سب سے زیادہ ساتھ کی اس کے
اسی اک موڑ پر خالی مکاں وہ کر گیا مجھ کو

مرے سارے یقیں جھوٹے، مرے سارے گماں دھوکہ
ہر اک جائے اماں میں بے اماں وہ کر گیا مجھ کو

کھلے ہیں پھول اس کی یاد کے ہر سمت آنگن میں
بہاروں میں ہی کیوں وقفِ خزاں وہ کر گیا مجھ کو؟


٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خالی جا م لئے بٹھے ہو اُن آنکھوں کی بات کرو
رات بہت ہے پیا س بہت ہے برساتوں کی بات کرو


جو پی کر مست ہوئے ہیں اُن کے ذکر سے کیا حاصل
جن تک جام نہیں پہنچا ہے اُن پیاسوں کی بات کرو


چپ رہنے سے کٹ نہ سکے گی صدیوں لمبی رات یہاں
جن یادوں سے دل روشن ہے اُن یادوں کی بات کرو


پھر پلکوں پر جگنو چمکے آنکھوں میں گٹھا سی لہرائی
ٹھنڈی ہئوا کا ذکر کرو کچھ بھیگی رتوں کی بات کرو


٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
اداس شامیں آُجاڑ رستے کبھی بلائیں تولوٹ آنا
کسی کی آنکھوں میں رتجگوں کےعذاب آئیں تو لوٹ آنا

ابھی نئی وادیوں نئے منظروں میں رہ لو مری جاں
یہ سارے ایک ایک کرکےجب تم کو چھوڑ جائیں تو لوٹ آنا

میں روز یوں ہی ہوا پہ لکھ لکھ کےاس کی جانب یہ بھیجتاہوں
کہ اچھے موسم اگرپہاڑوں پہ مسکرائیں تو لوٹ آنا

اگر اندھیروں میں چھوڑ کرتم کو بھول جائیں تمہارے ساتھی
اور اپنی خاطر ہی اپنےاپنے دیئے جلائیں تو لوٹ آنا

مری وہ باتیں جن پہ تو ہنستا تھا کھلکھلا کر
بچھڑنے والےمیری وہ باتیں کبھی رلائیں تو لوٹ آنا


٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


دل کے صحرا میں کوئی آس کا جگنو بھی نہیں
اتنا رویا ہوں کہ اب آنکھ میں آنسو بھی نہیں

قصئہ درد لئے پھرتی ھے گلشن کی ہوا
میرے دامن میں تیرے پیار کی خوشبو بھی نہیں

چھن گیا میری نگاہوں سے بھی احساسِ جمال
تیری تصویر میں پہلا سا وہ جادو بھی نہیں

موج در موج تیرے غم کی شفق کھلتی ہے
مجھے اس سلسلئہ رنگ پہ قابو بھی نہیں

دل وہ کمبخت کہ دھڑکے ہی چلا جاتا ہے
یہ الگ بات کہ تو زینتِ پہلو بھی نہیں

یہ عجب راہگزر ھے کہ چٹانیں تو بہت
اور سہارے کو تیری یاد کے بازو بھی نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


پھر ساون رت کی پون چلی تم یاد آئے 
پھر پتوں کی پازیب بجی تم یاد آئے 

پھر کونجیں بولیں گھاس کے ہرے سمندر میں 
رت آئی پیلے پھولوں کی تم یاد آئے 

پھر کاگا بولا گھر کے سونے آنگن میں 
پھر امرت رس کی بوند پڑی تم یاد آئے 

پہلے تو میں چیخ کے رویا اور پھر ہنسنے لگا 
بادل گرجا بجلی چمکی تم یاد آئے 

دن بھر تو میں دنیا کے دھندوں میں کھویا رہا 
جب دیواروں سے دھوپ ڈھلی تم یاد آئے



٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں
ایک میلے میں پہنچا ہمکتا ہوا
جی مچلتا تھا ایک ایک شے پر مگر
جیب خالی تھی کچھ مول لے نہ سکا
لوٹ آیا لیے حسرتیں سینکڑوں
ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں


خیر محرومیوں کے وہ دن تو گئے
آج میلہ لگا ہے اسی شان سے
آج چاہوں تو اک اک دکاں مول لوں
آج چاہوں تو سارا جہاں مول لوں
نا رسائی کا اب جی میں دھڑکا کہاں؟
پر وہ چھوٹا سا ، الہڑ سا لڑکا کہاں؟


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
بات یہ تیرے سِوا اور بھلا کس سے کریں
تُو جفا کار ہوا ہے، تو وفا کس سے کریں

آئینہ سامنے رکھیں تو نظر تُو آئے
تُجھ سے جو بات چُھپانی ہو کہا کس سے کریں

زُلف سے، چشم و لب و رُخ سے کہ تیرے غم سے
بات یہ ہے کہ دِل و جاں کو رہا کس سے کریں

تُو نہیں ہے تو پھر اے حُسنِ سخن ساز بتا
اِس بھرے شہر میں ہم جیسے ملا کس سے کریں

ہاتھ اُلجھے ہوئے ریشم میں پھنسا بیٹھے ہیں
اب بتا کون سے دھاگے کو جُدا کس سے کریں
تُو نے تو اپنی سی کرنی تھی، سو کر لی خاور
مسئلہ یہ ہے کہ ہم اِس کا گلہ کس سے کریں



٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


    کبھی تم بھی ہم کو ہی سوچنا، 
    رہا دل کہاں ،کبھی کھوجنا 
    کبھی اُڑتےپنچھی دبوچنا، 
    کبھی خود کھرنڈ کو نوچنا 
    کبھی جب شفق میں ہنسی کھلے، 
    کسی نین جھیل میں ،خوں ملے 
    تو اداس چاند کو ،دیکھنا، 
    کوئی رخ اکیلےہی ڈھونڈنا 
    یہ رُتیں جو دھیرےسےچھوتی ہیں 
    ہمیں، خوشبوؤں سےبھگوتی ہیں 
    یہ رُتیں نہ پھر کبھی آئیں گی ، 
    یہ جوروٹھ روٹھ کےجائیں گی 
    یہ رُتیں انوکھا سرور ہیں 
    کہ یہ پاس ہو کےبھی دور ہیں 
    انھیں تم دُعاؤں میں ڈھلنےدو، 
    انہیں آسمان کو، چلنےدو 
    ُسنوہوک جب کسی کونج میں 
    اِنھیں سرد، ہواؤں کی گونج میں 
    تو اداس چاند کو، دیکھنا 
    کبھی تم بھی،ہم کو ہی سوچنا۔۔۔


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭



سوکھے پیڑ سے ٹیک لگائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں
بانہوں میں چہرے کو چھپائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


جانے کب وہ آ جائے اس آس پہ اکثر راتوں کو
آنکھیں دروازے پہ جمائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


کاش وہی کچھ دکھ سکھ بانٹے بس اس آس میں اکثر میں
ہاتھوں میں تصویر اٹھائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


ماہِ نومبر میں تنہا میں اس کی سالگرہ کی شب
ویرانے میں دیپ جلائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


اُس کی تحریروں کے روشن لفظوں کی تاثیر ہے یہ
دنیا کے سب درد بھلائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


جسم و جاں میں پچھلی رُت جب محشر برپا کرتی ہے
دل کو یادوں میں سلگائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


یہ تو طے ہے جانے والے کم ہی لوٹ کے آتے ہیں
پھر بھی میں اک آس لگائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


آج صفی ہمدرد نہ کوئی درد کی ایسی شدت میں
آج اسے پھر دل میں بسائے پہروں بیٹھا رہتا ہوں


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

سنو لڑکی!
جدا ہونے سے پہلے
سوچ لینا کہ یہ
جدائی عذاب بن جاتی ہے
رگوں میں زہر بن کر دوڑتی ہے
ملنا بس میں نہیں ہوتا
جدا ہوئے تو
ملنے کی آس باقی نہیں رہتی
زندگی پھر زندگی نہیں رہتی


چلو ایسا کرتے ہیں
بچھڑ جاتے ہیں
بچھڑتے ہوئے ایک امید باقی رہتی ہے
ملنے کا امکان ہوتا ہے
کسی موڑ پہ

اچانک کہیں سامنے آنے پر
زندگی شادمان ہوتی ہے


چلو پھر ایسا ہی کرتے ہیں
جدائی کے سمے سے بچنے کے لیے
اک بار بچھڑ کے دیکھتے ہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

کیا اندھیروں کے دکھ، کیا اجالوں کےدکھ
جب ہرا دیں مقدر کی چالوں کے دکھ

جن کی آنکھیں نہیں وہ نہ روئیں کبھی
جان جائیں اگر آنکھ والوں کے دکھ

میری منزل کہاں، ہمسفر ہے کدھر
مار ڈالیں گے اب ان سوالوں کے دکھ

تم ملے ہو ، تمہاری محبت نہیں
ہجر سے بڑھ گئے ہیں وصالوں کے دکھ

دو گھڑی کے لئے پاس بیٹھو اگر
بھول جائیں گے ہم کتنے سالوں کے دکھ

میری سوچوں کے جلتے ہوئے دشت سے
چھین لے آ کے اپنے خیالوں کے دکھ


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


لمحہ لمحہ یاد آتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا
ہر موسم میں تڑپاتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


اب کے بھی وہ رُت آئی ہے شاید وہ بھی لوٹ ہی آئے
کہہ کہہ کے یہ بہلاتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


جب بھی تیری یاد سے آگے بڑھنا چاہوں تو دل میرا
پھر سے آنکھ میں لے آتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


تیرا رستہ تکتے تکتے آنکھ کے منظر سرد ہوئے یوں
ہر منظر میں در آتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


ویسے تو بے دردی جینا مشکل ہو جانا تھا لیکن
سانسیں ہر دم مہکاتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


آس امید کے دیپک سارے دھیرے دھیرے بجھ جاتے ہیں
ان کو پھر سے سلگاتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


ذات کے اس زنداں میں صفی جی بکھری ویرانی کے ڈر سے
ہر پل چیختا چلّاتا ہے پچھلی رُت کا ساتھ تمہارا


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


مرے اندربہت دن سے

کہ جیسے جنگ جاری ہے

عجب بے اختیاری ہے

میں نہ چاہوں مگر پھر بھی تمہاری سوچ رہتی ہے

ہر اک موسم کی دستک سے تمہارا عکس بنتا ہے

کبھی بارش تمہارے شبنمی لہجے میں ڈھلتی ہے

کبھی سرما کی یہ راتیں!

تمہارے سرد ہاتھوں کا دہکتا لمس لگتی ہیں

کبھی پت جھڑ!

تمہارے پاؤں سے روندے ہوئے پتوں کی آوازیں سناتا ہے

مجھے بے حد ستاتا ہے

کبھی موسم گلابوں کا!

تمہاری مسکراہٹ کے سبھی منظر جگاتا ہے

مجھے بے حد ستاتا ہے

کبھی پلکیں تمہاری، دھوپ اوڑھے جسم و جاں پر شام کرتی ہیں

کبھی آنکھیں، مرے لکھے ہوئے مصرعوں کو اپنے نام کرتی ہیں

میں خوش ہوں یا اُداسی کے کسی موسم سے لپٹا ہوں

کوئی محفل ہو تنہائی میں یا محفل میں تنہا ہوں

یا پھر اپنی لگائی آگ میں بجھ بجھ کے جلتا ہوں

مجھے محسوس ہوتا ہے

مرے اندربہت دن سے

کہ جیسے جنگ جاری ہے

عجب بے اختیاری ہے

اوراِس بے اختیاری میں

مرے جذبے، مرے الفاظ مجھ سے روٹھ جاتے ہیں

میں کچھ بھی کہہ نہیں سکتا، میں کچھ بھی لکھ نہیں سکتا

اُداسی اوڑھ لیتا ہوں

اوران لمحوں کی مٹھی میں!

تمہاری یاد کے جگنو کہیں جب جگمگاتے ہیں

یابیتے وقت کے سائے!

مری بے خواب آنکھوں میں کئی دیپک جلاتے ہیں

مجھے محسوس ہوتا ہے

مجھے تم کو بتانا ہے

کہ رُت بدلے تو پنچھی بھی گھروں کو لوٹ آتے ہیں

سنو جاناں، چلے آؤ

تمہیں موسم بلاتے ہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭




اب اے مرے احساس ِ جنوں، کیا مجھے دینا
دریا اُسے بخشا تو صحرا مجھے دینا

تم اپنا مکاں جب کرو تقسیم تو یارو
گرتی ہوئی دیوار کا سایا مجھے دینا
جب وقت کی مرجھائی ہوئی شاخ سنبھالو
اس شاخ سے ٹوٹا ہوا لمحہ مجھے دینا
تم میرا بدن اوڑھ کے پھرتے رہو لیکن
ممکن ہو تو اک دن مرا چہرہ مجھے دینا

چھو جائے ہوا جس سے تو خوشبو تری آئے
جاتے ہوئے اک زخم تو ایسا مجھے دینا
شب بھر کی مسافت ہے گواہی کی طلبگار
اے صبح ِ سفر، اپنا ستارہ مجھے دینا
ایک درد کا میلہ کہ لگا ہے دل و جاں میں
ایک روح کی آواز کہ ’’ رستہ ‘‘ مجھے دینا
ایک تازہ غزل اذن ِ سخن مانگ رہی ہے
تم اپنا مہکتا ہوا لہجہ مجھے دینا

وہ مجھ سے کہیں بڑھ کے مصیبت میں تھا محسن
رہ رہ کے مگر اُس کا دلاسہ مجھے دینا



ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا
بچتے رہے ہوائوں سے در، تم کو اس سے کیا

تم موج موج مثل صبا گھومتے رہو
کٹ جائے میری سوچ کے پر، تم کو اس سے کیا

اوروں کا ہاتھ تھامو، انھیں راستہ دکھائو
میں بھول جائوں اپنا ہی گھر، تم کو اس سے کیا

ابر گریز پا کو برسنے سے کیا غرض
سیپی میں بننے نہ پائے گہر، تم کو اس سے کیا

لے جائیں مجھ کو مال غنیمت کے ساتھ عدو
تم نے تو ڈال دی ہے سپر، تم کو اس سے کیا

تم نے تو تھک کے دشت میں خیمے لگا لیئے
تنہا کٹے کسی کا سفر، تم کو اس سے کیا




محبت کو بھلانا چاہیے تھا
مجھے جی کر دکھانا چاہیے تھا

مجھے تو ساتھ اس کا بھی بہت تھا
اسے سارا زمانہ چاہیے تھا

پرندہ اس لیے بے کل تھا اتنا
اسے بھی آشیانہ چاہیے تھا

تم اُس کے بن ادھورے ہو گئے ہو
تمہیں اُس کو بتانا چاہیے تھا

بہت پھرتا رہا تھا در بدر میں
مجھے بھی اک ٹھکانہ چاہیے تھا

چراغاں ہو رہا تھا شہر بھر میں
ہمیں بھی دل جلانا چاہیے تھا




Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...

MusicPlaylistView Profile
Create a playlist at MixPod.com
CURRENT MOON
Blogger Wordpress Gadgets