Short Urdu Poems

تمنا
-------
عمر کا وہ حصہ کہ جہاں
میں اور احساس دونوں جوبن پہ تھے
میں نے تم کو پانے کی تمنا میں
دونوں کو بوڑھا کر ڈالا۔ ۔ ۔ ۔ ۔

**************************


تمہیں دل سے بھلانے کی
شعوری کوششیں کرکے
تمہیں نہ یاد کرنے کی
ضروری کوششیں کرکے
میں خود ہی تھک گیا ہو ں اب
ادھوری کوششیں کرکے

**************************



شاید
--------
زندگی کے رستے میں
شام ہوگئی شاید
ہاتھ تھام کر میرا
شبنمی فضاؤں کی
سمت لے کے آتا ہے
درد مُسکراتا ہے

**************************


تجزیہ
-------
دو طرح کے لوگ محبت نہیں کرتے
ایک میرے اور ایک تمہارے جیسے
ایک تم ہو کہ
تمہیں میرے باطن کا حسن نظر نہیں آتا
اور ایک میں ہوں کہ
میں تمہیں آر پار دیکھتی ہوں
تمہارے اور میرے جیسے لوگ محبت نہیں کرسکتے

**************************


پانی اور پیاس
----------------
میں زندگی سے پوچھتی ہوں
یہ مجھ سے کیا چاہتی ہے
اور زندگی مسکراتی ہے
میں حیران ہوں
پانی بے رنگ
اور پیاس کے اتنے رنگ

**************************

شکوہ
---------
میں نے تم سے تمہیں مانگا
تو تم مسکرادیئے
تم یہ بھی تو کہہ سکتے تھے
کہ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
اپنی چیزیں مانگا نہیں کرتے۔ ۔ ۔


**************************


اس نے مٹی کی دیوار پر
کچے رنگوں کے ساتھ
میرا نام لکھ کر
بارش کی دُعا مانگی ہے۔۔۔

**************************


وہ کہتی تھی !
تو سمندر ہےمیں ساحلوں کی ہوا !
میں نے سوچا ہی نہیں !
سمندر کب کسی کو ملتا ہے
!

**************************


چلو یہ فرض کرتے ہیں
کہ تم مشرق
میں مغرب ہوں
چلو یہ مان لیتے ہیں
بڑا لمبا سفر ہے یہ
مگر
یہ بھی حقیقت ہے
تمہاری ذات کا سورج
بہت سا راستہ چل کر
میری ہستی میں ہی ڈوبے گا

**************************


عالم محبت میں
----------------
عالم محبت میں !
اک کمال وحشت میں
بے سبب رفاقت میں
دکھ اٹاھانا پڑتا ہے
تتلیاں پکڑنے کو
بہت دور تک جانا
پڑتا ہے

**************************

محبت
ہجر
نفرت
سب مل چکے ہیں مجھے
میں اب تقریبا مکمل ہوچکی ہوں

**************************


میں نے ان سے بدلے لہجے کی وضاحت پوچھی
کچھ دیر خاموش رہے
پھر مسکراکے بولے
پاگل !
جب لہجے بدل جایئں
تو
وضاحتیں کیسی

**************************


خوشبختی سمجھ لو
یا ۔۔۔
سیاہ بختی کہہ لو
مجھے سارے زمانے میں
محبت ہے تو بس
تم سے

**************************

یہ ہم تسلیم کرتے ہیں
ہمیں فرصت نہیں ملتی
مگر۔ ۔ ۔ ۔
او میری سوچ کے محور !
کبھی یہ بھی ذرا سوچو !!!
کہ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
تمہیں ہم یاد کرتے ہیں
تو خود کو بھول جاتے ہیں

**************************


کبھی اترو یوں میرے دل کے کچے آنگن میں
کسی اداس موسم میں
کسی ویران لمحے میں
چپکے سے دبے پاؤں
میری آنکھوں پہ رکھ دو ہاتھ اپنے
اور ہنستے ہوئے کہدو
بوجھ لو تو ہم تمہارے
نہیں تو آپ ہمارے

**************************

کیسا ہجر ہے
دل کی نا آباد فضاؤں میں
یوں اترا ہے
جیسے گہری شام تیری آنکھوں میں جا اتری تھی
سوچ رہی ہوں
ہجر کی دھیمی آنچ میں جلتی
بیتی ہوئی اس شام میں جانے
کب تک تم کو جینا ہوگا
مجھ کو کب تک مرنا ہوگا

**************************

کوئی موسم ہو وصل وہجر کا
ہم یاد رکھتے ہیں
تری باتوں سے اس دل کو
بہت آباد رکھتے ہیں

کبھی دل کے صحیفے پر
تجھے تصویر کرتے ہیں
کبھی پلکوں کی چھاں میں
تجھے زنجیر کرتے ہیں
کبھی خوابیدہ شاموں میں
کبھی بارش کی راتوں میں

کوئی موسم ہو وصل و ہجر کا
ہم یاد رکھتے ہیں

**************************



کہتے ہیں جب گھر میں اچانک
ایسی آگ بھڑک اٹھے
جو چشمِ زدن میں
ہر یک شے کو اپنی لپیٹ میں لے لے،
آگ بجھانا مشکل ہو اور
گھر کا اثاثہ اس سے بچانا ناممکن ۔۔۔تو
ایک ہی رستہ رہ جاتا ہے
جو بچتا ہے وہی بچائو!
گھر کی سب سے قیمتی چیز ہاتھ میں لو اور
اس سے دور نکل جائو

میرے دل میں بھی ایسی ہی آگ لگی تھی
میں نے جلدی جلدی آنکھ میں تیرے بجھتے خواب سمیٹے
تیری یاد کے ٹکڑے چن کر دھیان میں رکھے
اور اس آگ میں دل کو جلتا چھوڑ کے دور نکل آیا ہوں
میں نے ٹھیک کیا ہے ۔۔۔نا


**************************


عجب کشمکش کے راستے ہیں
بڑی کٹھن یہ مسافتیں ہیں
میں جس کی راہوں میں بِچھ گئی ہوں
اسی کو مجھ سے شکائتیں ہیں
شکائتیں سب بجا ہیں، لیکن
میں کیسے اس کو یقیں دلاؤں
اُسے بُھلاؤں تو 
مر نہ جاؤں
میں اس خموشی کے امتحاں میں
کہاں کہاں سے گزر گئی ہوں
اُسے خبر بھی نہیں ہے شاید
میں دھیرے دھیرے
بکھر گئی ہوں


**************************


میرے ساتھی !

میری یہ روح میرے جسم سے پرواز کر جائے

تو لوٹ آنا

میرے بے خواب راتوں کے عذابوں پر 

سسکتے شہر میں تم بھی

زرا سی دیر کو رکنا

میرے بے نور ہونٹوں کی دعاؤں پر 
تم اپنی سرد پیشانی کا پتھر رکھ کے رو دینا

بس اتنی بات کہ دینا

"مجھے تم سے محبت ہے

**************************



مِلن ممکن نہیں

مقدر کے ستاروں پر
اُداسی کی لکیریں ہیں
کوئی سرگوشیاں کر دے
ہمیں خوش فہمیاں دے دے
مِلن کی سب بہاروں کے 
سبھی موسم تمہارے ہیں
مگر ہم جانتے ہیں سب
مقدر کے ستاروں پر
اُداسی کی لکیروں نے
فقط اتنا ہی لکھا ہے
بہت ہی خوب لکھا ہے
تمہیں سورج کہا ہے 
ہمیں مہتاب لکھا ہے
مِلن ممکن نہ ہو جن کا

**************************


سنو ایک کام ھے تم سے
میرا وہ کام تم کردو
جو سینے میں دھڑکتا ہے
مجھے وہ دل نہ دو لیکن
جو چاہت اس کے اندر ہے
وہ میرے نام تم کردو

**************************


مقدّر 

میں وہ لڑکی ہوں 
جس کو پہلی رات 
کوئی گھونگھٹ اُٹھا کے یہ کہہ دے ۔۔ 
میرا سب کچھ ترا ہے ، دل کے سوا

**************************


پیار

ابرِ بہار نے 
پھول کا چہرا 
اپنے بنفشی ہاتھ میں لے کر 
ایسے چوما 
پھول کے سارے دکھ 
خوشبو بن کر بہہ نکلے ہیں

**************************


گمان 

اور اپنے نیم خوابیدہ تنفس میں اترتی 
چاندنی کی چاپ سنتی ہوں 
گماں ہے 
آج بھی شاید 
میرے ماتھے پہ تیرے لب 
ستارے ثبت کرتے ہیں

**************************


بس اتنا یاد ہے 


دعا تو جانے کون سی تھی 
ذہن میں نہیں 
بس اتنا یاد ہے 
کہ دو ہتھیلیاں ملی ہوئی تھیں 
جن میں ایک مری تھی 
اور اک تمھاری !

**************************


میرے کچھ لفظ ایسے ھوں

جو اپنی بند آنکھوں سے

تیرے دل کی ھر اک تحریر پڑھتے ھوں

وہ ھوں تو لفظ لیکن اپنی اک تقدیر رکھتے ھوں

کبھی جو روٹھ جاؤ تم

نہ مجھ سے مان پاؤتم

تو پھر تم کو منانے کی وہ ھر تدبیر رکھتے ھوں

میرے کچھ لفظ ایسے ھوں


**************************


کٹھن ہے زندگی کتنی
سفر دشوار کتنا ہے
...کبھی پاؤں نہیں چلتے
...کبھی رستہ نہیں ملتا
ہمارا ساتھ دے پائے
کوئی ایسا نہیں ملتا
فقط ایسے گزاروں تو
یہ روز و شب نہیں کٹتے
یہ کٹتے تھے کبھی پہلے
مگر ہاں اب نہیں کٹتے
مجھے پھر بھی میرے مالک
کوئی شکوہ نہیں تجھ سے
میں جاں پر کھیل سکتی ہوں
میں ہر دکھ جھیل سکتی ہوں
اگر تو آج ہی کر دے
محبت ہمسفر میری

**************************


کہا تھا ناں ۔۔۔؟
محبت خاک کر دے گی
جلا کر راکھ کر دے گی
کہیں بھی تم چلے جاؤ
کسی کے بھی تم بنو اور جس کسی کو چاہے اپناؤ
ہماری یاد سے پیچھا چُھڑانا، 
اِس قدر آساں نہیں *جاناں!
کہا تھا ناں؟
محبت خاک کر دے گی
جلا کر راکھ کر دے گی

**************************


انا

کئی برسوں سے ایسا ہے
کہ اِک ویران رستہ ہے
جو برسوں سے
ہمارے بیچ حائل ہے
انا کے خون میں لِپٹی
وہ اک جانب کھڑی ہے اور
انا کے خول میں لِپٹا
اسی ویران رستے کے کنارے
دوسری جانب
نجانے کتنے برسوں سے
اکیلا میں کھڑا ہوں

**************************


محبت تو بارش ہے
جسے چھونے کی خواہش میں
ہتھیلیاں گیلی ہو جاتی ہیں
مگر ہاتھ ہمیشہ خالی ہی رہتے ہیں

**************************


محبت تم نے کب کی ہے؟
محبت میں نے کی ہے
جانِ جاں تم سے
تمہا ری آرزو سے
جس کے ریشم سے تمہا ری
سرمئی خوشبونے 
گرہیں باند ھ رکھی ہیں
یہ گر ہیں ہاتھ کی پوروں میں آکر
پھسلتی ہیں مگر کھلتی نہیں جا ناں
طلسمِ خامشی ٹوٹے تویہ
یہ گرہیں بھی کھل جائیں
جو آنکھیں ہجر کی مٹی میں مٹی
ہو رہی ہیں
وہ بھی دُھل جا ئیں

**************************



مُٹھّی بھر ریت

بے کراں دشت کی ساخت میں
دُھوپ جب جسم چاٹنے لگ جائے
دل کا دریا بھی سُوکھنے لگ جائے
اُس گھڑی 
خود کو مجتمع کرنا
اس کے چہرہ کو دھیان میں لانا
اور پھر 
ریت بھر کے مُٹھّی میں
اپنی آنکھوں کو باوضو کرنا
اپنے چہرے کو قبلہ رو کرنا
دُھوپ کا زور ٹوٹ جائے گا
بے کراں دشت کی ساخت میں
زندگی کا پیام آئے گا

**************************


فراق صدیوں پہ چھا گیا نا، وہی ہوا نا
وصال لمحہ چلا گیا نا، وہی ہوا نا
کہا تھا چاہت کا وار سہہ کر جیو گے کیسے
یہ گھاؤ اندر سے کھا گیا نا، وہی ہوا نا
مدامِ گردش میں دل کو رکھنے کا ہے نتیجہ
پھر اُس کی چوکھٹ پہ آ گیا نا، وہی ہوا نا
تمہیں یہ کس نے کہا تھا دن میں ہی خواب دیکھو
وہ خواب نیندیں چُرا گیا نا، وہی ہوا نا
جسے سمندر کہا تھا تم نے، کہاں گیا وہ
وہ تم کو آنسو رلا گیا نا، وہی ہوا نا
بتول کتنا کہا تھا اُس کو مت آزماؤ
وہ روگ پھر سے لگا گیا نا، وہی ہوا نا

**************************

ســــــاون



ســــــاون کــــــی بنیــــــاد مــــــیں




جــــــانے کــــــس کے آنـســــــو ہیـــں




صــــــدیوں پہــــــلے جانے کــــــوئی




صــــــدیوں بیــــــٹھ کــــــے رویا تھــــــا


**************************





سِلسلہ


خوابوں میں تُو نے آ کر
اور نیند سے جگا کر
آنکھوں کی پُتلیوں میں
اِک عکس لا بِٹھایا
کچھ اِس طرح میں کھویا
پھر رات بھر نہ سویا


**************************


چاند کبھی تو تاروں کی اس بِھيڑ سے نکلے
اور مری کھڑکی ميں آئے
بالکل تنہا اور اکيلا
ميں اس کو بانہوں ميں بھر لوں
ايک ہی سانس سب کی سب وہ باتيں کر لوں
جو ميرے تالُو سے چمٹی
دل ميں سمٹی رہتی ہيں
سب کچھ ايسے ہی ہو جائے جب ہے ناں
چاند مری کھڑکی ميں آئے، تب ہے ناں 



**************************


میں نے تو بس خواب بیچے تھے




خواب لے لو

بازار میں
اِک شخص
صدا لگا رہا تھا
"خواب لے لو "
"خواب لے لو"
اور لوگ تھے
کہ دھڑا دھڑ
اس سے خواب خرید رہے تھے
ایک آدمی نے کہا
ابھی تو
پچھلے برس کے خواب پورے نہیں ہوئے


خواب فروش نے جواب دیا
کہ
میں نے صرف خواب بیچے تھے
تعبیریں نہیں

**************************


پیش کش



اتنے اچھے موسم میں

روٹھنا نہیں اچھا

ہار جیت کی باتیں

کل پہ ہم اٹھا رکھیں

آج دوستی کر لیں 


**************************

واہمہ




تمھارا کہنا ہے

تم مجھے بے پناہ شدت سے چاہتے ہو

تمھاری چاہت

وصال کی آخری حدوں تک

مرے فقط میرے نام ہوگی

مجھے یقین ہے مجھے یقین ہے

مگر قسم کھانے والے لڑکے

تمھاری آنکھوں میں ایک تل ہے!


**************************


پیار



ابرِ بہار نے

پھول کا چہرا

اپنے بنفشی ہاتھ میں لے کر

ایسے چوما

پھول کے سارے دکھ

خوشبو بن کر بہہ نکلے ہیں


**************************

گمان



میں کچی نیند میں ہوں

اور اپنے نیم خوابیدہ تنفس میں اترتی

چاندنی کی چاپ سنتی ہوں

گماں ہے

آج بھی شاید

میرے ماتھے پہ تیرے لب

ستارے ثبت کرتے ہیں



**************************

بس اتنا یاد ہے



دعا تو جانے کون سی تھی

ذہن میں نہیں

بس اتنا یاد ہے

کہ دو ہتھیلیاں ملی ہوئی تھیں

جن میں ایک مری تھی

!اور اک تمھاری  

************************** 


فاصلے



پہلے خط روز لکھا کرتے تھے

دوسرے تیسرے ، تم فون بھی کر لیتے تھے

اور اب یہ ، کہ تمھاری خبریں

!صرف اخبار سے مل پاتی ہیں  



**************************

کتھا رس



میرے شانوں پہ سر رکھ کے

آج

!کسی کی یاد میں وہ جی بھر کے رویا  




**************************

چاند


ایک سے مسافر ہیں

ایک سا مقدر ہے

میں زمین پر تنہا

!اور وہ آسمانوں میں  


               **************************




نوید


سماعتوں کو نوید ہو ۔۔۔ کہ

ہوائیں خوشبو کے گیت لے کر

!دریچہٴ گل سے آ رہی ہیں 



**************************

ایک شعر



خوشبو بتا رہی ہے کہ وہ راستے میں ہے

موجِ ہوا کے ہاتھ میں اس کا سراغ ہے



**************************


تشکر


دشتِ غربت میں جس پیڑ نے

میرے تنہا مسافر کی خاطر گھنی چھاؤں پھیلائی ہے

اُس کی شادابیوں کے لیے

میری سب انگلیاں ۔۔۔

!ہوا میں دعا لکھ رہی ہیں  



**************************

توقع


جب ہوا

دھیمے لہجوں میں کچھ گنگناتی ہوئی

خواب آسا ، سماعت کو چھو جائے ، تو

کیا تمھیں کوئی گزری ہوئی بات یاد آئے گی 
؟



**************************

اعتراف



جانے کب تک تری تصویر نگاہوں میں رہی

ہو گئی رات ترے عکس کو تکتے تکتے

میں نے پھر تیرے تصور کے کسی لمحے میں

 !تیری تصویر پہ لب رکھ دیے آہستہ سے  


**************************

موسم کی دُعا



پھر ڈسنے لگی ہیں سانپ راتیں

برساتی ہیں آگ پھر ہوائیں

پھیلا دے کسی شکستہ تن پر

!بادل کی طرح سے اپنی بانہیں  




**************************

مقدّر



میں وہ لڑکی ہوں

جس کو پہلی رات

کوئی گھونگھٹ اُٹھا کے یہ کہہ دے ۔۔

 !میرا سب کچھ ترا ہے ، دل کے سوا  



**************************

تیری ہم رقص کے نام



رقص کرتے ہوئے

جس کے شانوں پہ تُو نے ابھی سَر رکھا ہے

کبھی میں بھی اُس کی پناہوں میں تھی

فرق یہ ہے کہ میں

رات سے قبل تنہا ہوئی

اور تُو صبح تک

!اس فریبِ تحفظ میں کھوئی رہے گی 



**************************

ایک شعر


حال پوچھا تھا اُس نےابھی

!اور آنسو رواں ہو گئے 



**************************


پکنک



سکھیاں میری

کُھلے سمندر بیچ کھڑی ہنستی ہیں

اور میں سب سے دور ، الگ ساحل پر بیٹھی

آتی جاتی لہروں کو گنتی ہوں

یا پھر


!گیلی ریت پہ تیرا نام لکھے جاتی ہوں 



************************** 


اب بھی 

سنو اب رات کے ساڑھے دس بجے
فون کی گھنٹی نہیں بجتی
لیکن اب بھی اسی مخصوص وقت پر
سماعتوں کو انتظار ہوتا ہے
جیسے اچانک،
فون کی گھنٹی بج اُٹھے گی
اور فون اٹھانے پر،
دوسری جانب سے،
کوئی آہستہ سے پوچھے گی،
سو تو نہیں گئے تھے؟
طبیعت کیسی ہے؟
اور ہاں دوا باقاعدگی سے لیتے ہو ناں؟
گھر میں باقی سب کیسے ہیں؟
موسم کیسا ہے؟
اپنا خیال رکھنا
اچھا پھر کل بات ہوگی، خُدا حافظ کہہ کر
رسیور رکھ دے گی

************************** 



جب یہ سوچو کہ بھر چکا ہے دل
میری چاہت، میری رفاقت سے
خود کو وقفِ عذاب مت کرنا
لمبا چوڑا خطاب مت کرنا
کارڈ بھی انتخاب مت کرنا
اِک سُوکھا ہوا گلاب کا پھول
بس لفافے میں بھیج دینا تم
میری تشنہ محبتوں کے نام
موسمِ گل کا آخری پیغام

میں کب سے 
بے یقینی اور دکھ کی آخری حد پہ کھڑی
بس تک رہی ہوں اپنے ہاتھوں کو
کہ جس میں
بس زرا سی دیر پہلے ہی
ہماری دوستی کے کتنے خوش رنگ
اور
کتنے قیمتی موتی دھرے تھے
ہمارے بیچ پھیلے
اعتماد و پیار کے موسم کا ہر ایک رنگ
سجا تھا میرے ہاتھوں میں
(یا شایدوہم تھا میرا)
مگر اب
کچھ نہیں 
بس ہاتھ خالی ہیں






زندگی کے رستے میں

شام ہوگئی شاید

ہاتھ تھام کر میرا

شبنمی فضاؤں کی

سمت لے کے آتا ہے

درد مُسکراتا ہے





************************** 



یادوں کی راکھ

میرا کل، میرا ماضی ہے
اِس ماضی کی کچھ یادیں ہیں 
اِس ماضی کی تحریریں ہیں 
اور ڈھیر سی تصویریں ہیں 
یہ ماضی مجھے جینے نہیں دیتا 
کچھ آگے چلنے نہیں دیتا
اِسی لئے میں سوچتا ہوں 
کیوں نہ اِن یادوں کا آج 
ڈھیر لگا کر 
تحریریں، تصویریں جلا کر 
اور اِن کی پھر راکھ بنا کر 
کھڑکی کھول کے، تیز ہوا میں 
راکھ یہ آج، اُڑا دیتا ہوں 
دل سے تُجھے بُھلا دیتا ہوں


**************************




جاناں میری بات سُنو

کچھ لمحے
ان درد میں ڈُوبی پلکوں کے سنّاٹے میں
کچھ خواب بُنو
کچھ لمحے
تم تِتلی بن کر تنہائی کے غاروں
میں بے باک اُڑو

کچھ لمحے
تم اُنگلی پکڑ کر خاموشی کی
پگڈنڈی پر ساتھ چلو
کچھ لمحے
اُس نیلی بارش کے منظر میں رنگ بھرو
دل چاہتا ہے
تم آج ہمارے ساتھ رہو
جاناں میری بات سُنو


**************************

چلو اس شام

چلو اس شام کوئی اور ہی قصہ سناتے ہیں

چلو اس شام اس کو ہم سرے سے بھول جاتے ہیں

چلو اس شام کوئی آنے والا خواب بنتے ہیں

چلو اس شام ہم کلیاں نہیں کانٹوں کو چنتے ہیں

چلو اس شام جشن تیرگی ہنس کر منائیں ہم



چلو اس شام اس کو پھر سرے سے بھول جائیں ہم    



**************************




تم جب بچھڑ کر جا رہے تھے

تو تمہارے قدموں کی چاپ۔۔۔۔

میرے دل پر پڑ رہی تھی۔۔۔۔



**************************



ہجر رتوں کے ساتھی
عمر کی جھولی میں جیون نے
دیکھوں کیا کیا ڈالا ہے
کچھ وصل کے مٹھی بھر لمحے
کچھ ہجرتوں کی تنہائی
ملن کی اک انمول گھڑی
کچھ مایوسی اور رسوائی
ایک محبت یکطرفہ
اور کچھ بے چین سی راتیں ہیں
دو باتیں ان کہی ہوئی
اور جھولی بھر بھر یادیں ہیں
اب انکے ساتھ ہی جینے ہیں
جو دن دنیا میں باقی ہیں
ان تحفوں کا نہ مول کوئی
یہ ہجر رتوں کے ساتھی ہیں



**************************






تمہیں کھونے سے ڈرتا ہوں


میں خواب بہت دیکھتا ہوں
ایسے خواب
جن میں کوئی دکھ کوئی پریشانی نہیں ہوتی
جن میں وصل کے رستے ہجر کی وادی سے ہو کر نہیں گزرتے
جن میں محبت ہمیشہ ادھ کھلے پھول کی طرح خوبصورت
اور بچے کی مسکان کی طرح پاکیزہ ہوتی ہے



آخری گفتگو
یہ تصویریں ہیں
خط ہیں
اور کچھ پُرزے ہیں
جن پر تُم مجھے پیغام لکھتی تھیں
انہیں محفوظ کر لو
ہاں مگر افسوس
ٹیلی فون پر جو گفتگو
تم مجھ سے کرتی تھیں
اُنہیں میں تم کو واپس کر نہیں سکتا
جو میری دسترس میں تھا
تمہارے سامنے ہے سب
جو باقی ہے
صدا ہے اب ۔۔۔۔






کبھی کبھی کوئی یادکوئی بہت پرانی یاد
دل کے دروازے پرایسے دستک دیتی ہے
شام کو جیسے تارا نکلےصبح کو جیسے پھول
جیسے دھیرے دھیرے زمیں پرروشنیوں کا نزول
جیسے روح کی پیاس بجھائےاُترے کوئی رسول
جیسے روتے روتے اچانکہنس دے کوئی ملول
کبھی کبھی کوئی یادکوئی بہت پرانی یاد
دل کے دروازے پرایسے دستک دیتی ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets