Friday, 17 April 2015

خوش چشم وخوش اطوار و خوش آور و خوش آندام



وہ یار پری چہرہ کہ کل شب کو سدھارا
طوفاں تھا، طلاطم تھا چھلاوہ تھا شرارا

گل بیز و گہر ریز و گہر و گہر تاب
کلیوں نے جسے رنگ دیا گل نے سنواراہ

نو خستہ و نورس و نو طلعت و نو خیز
وہ نقش جسے خود یدِ قدرت نے ابھارا

خوں ریز کم آمیز و دل آویز و جنوں خیز
ہنستا ہوا مہتاب ، دمکتا ہو تارا

خوش چشم وخوش اطوار و خوش آور و خوش آندام 
ایک خال پہ قرباں سمر قندو بخارا

گل پیرہن و گل بدن و گل رخ و گل رنگ
ایمان شکن، آئینہ جبیں انجمن آرا

سرشار جوانی تھی کہ امڈے ہوئے بادل
شاداب تبسم تھا کہ جنت کا نظارا

زلفیں تھیں کہ ساون کی مچلتی ہوئی راتیں
شوخی تھی کہ سیلاب کا مڑتا ہوا دھارا​

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets