Friday, 26 August 2011

AB TO HAATHON SAY LAKEEREN BHI MITI JATI HAIN





Us kay nazdeek gham e tark e wafa kuch bhi nhi
Mutma'in aisa hai woh jesay hua kuch bhi nhi


Ab to haathon say lakeeren bhi miti jati hain
USs ko kho kar to meray pass raha kuch bhi nhi


Kal bichharna hai to phir ehad e wafa soch kay baandh
Abhi aaghaaz e muhabbat hai gaya kuch bhi nhi

Chaar din reh gaye mailay men magar ab kay bhi
Us nay aanay kay liye khat men likha kuch bhi nhi

Mein to is waastay chuup hoon keh tamasha na bannay
Tu samajhta hai mujhay tujh say gila kuch bhi nhi

Ay Shumaar isi terha aankhen bichhaaye rakhna
Janay kis waqt woh aa jaaye pata kuch bhi nhi


اُس کے نزدیک غمِ ترکِ وفا کچھ بھی نہیں
مطمئن ایسا ہے وہ جیسے کہ ہوا کچھ بھی نہیں

اب تو ہاتھوں سے لکیریں بھی مٹی جاتی ہیں
اُس کو کھو کر تو میرے پاس رہا کچھ بھی نہیں

کل بچھڑنا ہے تو پھر عہدِ وفا سوچ کے باندھ
ابھی آغازِ محبت ہے گیا کچھ بھی نہیں

میں تو اس واسطے چپ ہوں کہ تماشہ نہ بنے
تو سمجھتا ہے مجھے تجھ سے گلہ کچھ بھی نہیں

اے شمار آنکھیں اسی طرح بچھائے رکھنا
جانے کس وقت وہ آجائے پتہ کچھ بھی نہیں


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets