Sunday, 20 September 2015

تیری انجمن، تیرا ھر کرم،تیری چاھتیں تو چھن گئیں



یوں ماتمی سے لباس میں کوئی آہ و فغاں ھے آج بھی
جیسے چشم تر میں خواب کوئی پریشاں ھے آج بھی

میں زندگی کی راہ گزر پر در بدر ھوں اس لیے
کہ محبتوں کے شھر میں دل بے مکاں ھے آج بھی

تیری آرزو ھے بہت مگر،میری پہنچ نھیں ھے اس قدر
میری خواھشوں کے واسطے تو آسماں ھے آج بھی

میں توحید کے ھر نصاب سے ویسے تو مسلمان ھوں
پر تجھے پوجنے کی بات ھے تو دل بے ایمان ھے آج بھی

تیری انجمن،تیرا ھر کرم،تیری چاھتیں تو چھن گئیں
مگر درد جو میرا نصیب تھا وہ مھربان ھے آج بھی

تیری اذیتوں کا سوال ھے تو مجھے کل بھی ضبط پہ ناز تھا
تجھے کوسنے کی بات ھے تو دل بے زباں ھے آج بھی

کبھی درد حد سے بڑھا بھی تو میں تیری حد سے بڑھا نھیں
میری سانس کی تسبیحوں میں اک تو ھی رواں ھے آج بھی

سو بادلوں کے سلسلے میری چھت پہ برس کے چلے گئے
پر جلا جلا دھواں دھواں میرا آسماں ھے آج بھی

مجھے کل ملے تھے کچھ گلاب جو تیرے لیے یہ کہہ گئے
تیرے انتظار میں سوگوار گلشن کا سامان ھے آج بھی


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets