Wednesday, 30 January 2013

Teri Aankhon Si Aankhen


Teri Aankhon Si Aankhen
aaj aik chehray pey dekhi hain
Wohi rangat, banaawat
aur waisi be'rukhi un men
bichartay waqt jo main ney
Teri aankhon men dekhi thi

Teri aankhoon si ankhoon ney
mujhay aik PaL ko dekha tha
woh paL aik aam sa paL tha
magar us aam sey paL men
puraanay kitnay mausom' kitnay manzar main ney dekhay thay
Meri jaa'n main samjha tha
teri aankhon si aankhen jab
meri aankhon ko dekhen gi
to ik Lamhay ko sochain gi
keh in aankhon ko pehLay bhi
kisi chehray pey dekha hai
Magar in jheeL aankhon men
shanasaayi nahi jaagi

Meri Aankhen ~!!
teri aankhon si aankhon k Liay
kab khaas aankhen thiin
teri aankhon ney shayad yeh
kaii chehron per dekhi hon
keh yeh to AAM aankhen hain

Main aisa soch sakta tha
mager main kaya karoon diL ka
jo ab yeh yaad rukhey ga
teri aankhon si aankhen
main ney aik chehray pey dekhi thiin
phir us k baad kitnay din
meri aankhoon men saawan tha



تیری آنکھوں سی آنکھیں



آج اک چہرے پہ دیکھی ہیں



وہی رنگت بناوٹ



اور ویسی بے رُخی اُن میں



بچھڑتے وقت جو میں نے



تیری آنکھوں میں دیکھی تھی



تیری آنکھوں سی آنکھوں نے



مجھے اک پل کو دیکھا تھا



وہ پل اک عام سا پل تھا



مگر اس عام سے پل میں



پرانے کتنے منظر، کتنے موسم



میں نے دیکھے تھے



مگر ان جھیل آنکھوں میں



شناسائی نھیں جاگی

میری آنکھیں



تیری آنکھوں سی آنکھوں کے لیے



کب خاص آنکھیں تھیں



مگر میں کیا کروں دل کا



جو اب یہ یاد رکھے گا



تیری آنکھوں سی آنکھیں



میں نے اک چہرے پہ دیکھی تھیں

پھر اس کے بعد کتنے دن



میری آنکھوں میں ساون تھا



Woh mujh sey poochthi hey, mausamo'n key dhang kaisey hain


Woh mujh sey poochthi hey, mausamo'n key dhang kaisey hain
Mein kehta houn, tumharey perahan key rang jaisey hain

Woh kehthi hey, mera her pal tujhey milney ko ji chahey
Mein kehta hoon, terey deedar ko aankhein tarasti hain

Woh kehti hey, merey aangan men mausam hey baharo'n ka
Mein kehta hoon, tera chehra hey khiltey phool ki manind

Woh kehti hey, kaii baatein hein dil men khaar ki surat
Mein kehta hoon, kaii yaaden hein dil men dhool ki manind

Woh kehti hey, koi din men koi milan ka din bhi aaey gaa
Mein kehta houn, kaya behtar nahi woh aaj ka din ho

Woh kehti hey, tumhen kyun is qadar jaldi hey milney ki
Mein kehta houn, mujhey her pal azaab'e jaan sa lagta hai

Woh kehti hey, mohabbat sey mussarat bhar gayi dil men
Mein kehta houn, abhi kuch gham bhi niklen gey ta'aqubb men

Woh kehti hey, mohabbat men bohat nadaan ho tum to
Mein kehta houn, masaayel sey bohat anjaan ho tum to

Woh mujh sey poochthi hey dard ki ye raat kab tak hey
Mein kehta houn, keh pagalpan ki koi hadd nahin hoti

Woh mujh sey poochthi hey, kaun rota hey kivaron men
Mein kehta houn, abhi ik dard hey dil ki daraaron men

Woh mujh sey poochthi hey, ishq kaya dewangi kaya hai
Mein kehta houn, Koi aatish rago'n men thehar jati hai


Tum



Tum jis khawab men aankhen kholo 
uska roop amar 
tum jis rang ka
 kapra pehno 
woh mausam ka rang 
tum jis phool ko hans kar dekho 
 kabhi na woh murjhaye 
tum jis harf pey ungli rakh do 
woh roshan ho jaye


تُم جس خواب میں آنکھیں کھولو
اُس کا رُوپ امر
تُم جس رنگ کا کپڑا پہنو
وہ موسم کا رنگ
تُم جس پھول کو ہنس کر دیکھو کبھی نہ وہ مرجھائے
تُم جس حرف پہ انگلی رکھ دو
وہ روشن ہو جائے

اب اپنے فیصلے پر خُود اُلجھنے کیوں لگی ہوں



اب اپنے فیصلے پر خُود اُلجھنے کیوں لگی ہوں
ذرا سی بات پر اتنا بکھر نے کیوں لگی ہوں
وہ جس موسم کی اب تک منتظر آنکھیں تھیں میری
اسی موسم سے اب میں اِتنا ڈرنے کیوں لگی ہوں
مُجھے نادیدہ رستوں پر سفر کا شوق بھی تھا
تھکن پاؤں سے لپٹی ہے تو مرنے کیوں لگی ہوں
مُجھے یہ چار دیواری کی رونق مار دے گی
مَیں اِک امکان تھی منزل کا مٹنے کیوں لگی ہوں
میں جس کو کم سے کم محسوس کرنا چاہتی تھی
اُسی کی بات کو اِتنا سمجھنے کیوں لگی ہوں
جو میرے دل کی گلیوں سے کبھی گُزرا نہیں تھا
اب اپنے ہاتھ سے خط اس کو لکھنے کیوں لگی ہوں
بدن کی راکھ تک بھی راستوں میں ناں بچے گی
برستی بارشوں میں یُوں سُلگنے کیوں لگی ہوں
وُہی سُورج ہے دُکھ کا پھر یہ ایسا کیا ہُوا ہے
میں پتھر تھی تو آخر اَب پگھلنے کیوں لگی ہوں

Meray honton pay dua thi shayed


Kum nigahi he rawa thi shayed
Aankh paband e haya thi shayed

Sar say aanchal tau na dhalka tha kabhi
Haan bohat taiz hawa thi shayed

Eik basti k thay raahi dono
Rah men deewar e ana thi shayed

Hum saffar thay tau bichray kyun thay
Apni manzil he juda thi shayed

Meri aankhon men ager aansu thay
Meray honton pay dua thi shayed

Tuesday, 29 January 2013

جانے یہ عشق ہے یا کوئی کرامت اپنی


ہم نے جو دیپ جلائے ہیں، تری گلیوں میں
اپنے کچھ خواب سجائے ہیں، تری گلیوں میں

جانے یہ عشق ہے یا کوئی کرامت اپنی
چاند لے کر چلے آئے ہیں، تری گلیوں میں

تذکرہ ہو تیری گلیوں کا تو ڈر جاتا ہے
دل نے وہ زخم اٹھائے ہیں، تری گلیوں میں

اس لئے بھی تری گلیوں سے ہمیں نفرت ہے
ہم نے ارمان گنوائے ہیں، تری گلیوں میں

کیوں ہر اک چیز ادھوری سی ہمیں لگتی ہے
جانے کیا چھوڑ کے آئے ہیں، تری گلیوں میں


زخم کیسے پھلتے ہیں، داغ کیسے جلتے ہیں، درد کیسے ہوتا ہے، کوئی کیسے روتا ہے


شہر کے دُکاں دارو! کاروبارِ الفت میں سُود کیا، زیاں کیا ہے، تم نہ جان پاؤ گے
دل کے دام کتنے ہیں، خواب کتنے مہنگے ہیں اور نقدِ جاں کیا ہے، تم نہ جان پاؤ گے


کوئی کیسے ملتا ہے، پھول کیسے کھلتا ہے، آنکھ کیسے جھکتی ہے، سانس کیسے رُکتی ہے
کیسے راہ نکلتی ہے، کیسے بات چلتی ہے، شوق کی زباں کیا ہے، تم نہ جان پاؤ گے


وصل کا سکوں کیا ہے ہجر کا جنوں کیا ہے، حُسن کا فُسوں کیا ہے عشق کا درُوں کیا ہے
تم مریضِ دانائی، مصلحت کے شیدائی، راہِ گمرہاں کیا ہے، تم نہ جان پاؤ گے


زخم کیسے پھلتے ہیں، داغ کیسے جلتے ہیں، درد کیسے ہوتا ہے، کوئی کیسے روتا ہے
اشک کیا ہے نالے کیا دشت کیا ہے چھالے کیا، آہ کیا فغاں کیا ہے تم نہ جان پاؤ گے


نامراد دل کیسے صبح و شام کرتے ہیں، کیسے زندہ رہتے ہیں اور کیسے مرتے ہیں
تم کو کب نظر آئی غم زدوں کی تنہائی، زیست بے اماں کیا ہے تم نہ جان پاؤ گے


جانتا ہوں میں تم کو ذوقِ شاعری بھی ہے، شخصیت سجانے میں اِک یہ ماہری بھی ہے
پھر بھی حرف چنتے ہو صرف لفظ سنتے ہو، ان کے درمیاں کیا تم نہ جان پاؤ گے

بس اتنا یاد ہے پہلی محبت کا سفر تھا وہ



جب اپنی اپنی محرومی سے ڈر جاتے تھے ہم دونوں
کسی گہری اُداسی میں اتر جاتے تھے ہم دونوں
بہارِ شوق میں بادِ خزاں آثار چلتی تھی
شگفتِ گل کے موسم میں بکھر جاتے تھے ہم دونوں
تمہارے شہر کے چاروں طرف پانی ہی پانی تھا
وہی اک جھیل ہوتی تھی جدھر جاتے تھے ہم دونوں
سنہری مچھلیاں، مہتاب اور کشتی کے اندر ہم
یہ منظر گم تھا پھر بھی جھیل پر جاتے تھے ہم دونوں
زمستاں کی ہواؤں میں فقط جسموں کے خیمے تھے
دبک جاتے تھے ان میں جب ٹھٹھر جاتے تھے ہم دونوں
عجب اک بے یقینی میں گزرتی تھی کنارے پر
ٹھہرتے تھے نہ اٹھ کے اپنے گھر جاتے تھے ہم دونوں
بہت سا وقت لگ جاتا تھا خود کو جمع کرنے میں
ذرا سی بات پر کتنا بکھر جاتے تھے ہم دونوں
کہیں جانا نہیں تھا اس لئے آہستہ رو تھے ہم
ذرا سا فاصلہ کر کے ٹھہر جاتے تھے ہم دونوں
زمانہ دیکھتا رہتا تھا ہم کو چور آنکھوں سے
نہ جانے کن خیالوں میں گزر جاتے تھے ہم دونوں
بس اتنا یاد ہے پہلی محبت کا سفر تھا وہ
بس اتنا یاد ہے شام و سحر جاتے تھے ہم دونوں
حدودِ خواب سے آگے ہمارا کون رہتا تھا
حدودِ خواب سے آگے کدھر جاتے تھے ہم دونوں

اسے گنوا کر پھر اسے پانے کا شوق کیسا؟


یہ خوف دل میں نگاہ میں اضطراب کیوں ہے؟
طلوع محشر سے پیشتر یہ عذاب کیوں ہے؟

کبھی تو بدلے یہ ماتمی رُت اداسیوں کی
مری نگاہوں میں ایک سا شہر خواب کیوں ہے؟

کبھی کبھی تیری بے نیازی سے خوف کھا کر
میں سوچتا ہوں تو مرا انتخاب کیوں ہے؟

فلک پہ بکھری سیاہیاں اب بھی سوچتی ہیں
زمیں کےسر پہ چادر آفتاب کیوں ہے؟

ترس گئے ہیں میرے آئینے اُس کے خال و خد کو
وہ آدمی ہے تو اس قدر لاجواب کیوں ہے؟

اسے گنوا کر پھر اسے پانے کا شوق کیسا؟
گناہ کرکے بھی انتظار ثواب کیوں ہے؟

ترے لئے اس کی رحمت بے کنار کیسی؟
مرے لئے اس کی رنجش بے حساب کیوں ہے؟

اسے تو محسن بلا کی نفرت تھی شاعروں سے
پھر اس کے ہاتھوں میں شاعری کی کتاب کیوں ہے؟


محبت خاک کر دے گی


کہا تھا ناں ۔۔۔ ؟
محبت خاک کر دے گی
جلا کر راکھ کر دے گی
کہیں بھی تم چلے جاؤ
کسی کے بھی تم بنو اور جس کسی کو چاہے اپناؤ
ہماری یاد سے پیچھا چُھڑانا،
اِس قدر آساں نہیں ‌جاناں!
کہا تھا ناں؟
محبت خاک کر دے گی
جلا کر راکھ کر دے گی

وصل کے روگ بُرے ہوتے ہیں


وصل کے روگ بُرے ہوتے ہیں
ہجر کے سوگ برے ہوتے ہیں

ہار میں دل کا ہاتھ ہے کچھ کچھ
اور کچھ لوگ برے ہوتے ہیں

صحراؤں میں کھو جاؤ گے!
عشق کے جوگ بُرے ہوتے ہیں

بستی بس کر مِٹ جائے گی
دل کے روگ بُرے ہوتے ہیں

سُکھ کے بدلے دُکھ دیتے ہیں
کچھ سنجوگ بُرے ہوتے ہیں


دھیان میں ہے پھر چہرہ ایک ماہتابی سا


آسماں کے رنگوں میں رنگ ہے شہابی سا
دھیان میں ہے پھر چہرہ ایک ماہتابی سا

منظروں نے کرنوں کا پیرہن جو پہنا ہے
میں نے اس کا رکھا ہے نام آفتابی سا

تم عجیب قاتل ہو روح قتل کرتے ہو
داغتے ہو پھر ماتھا چاند کی رکابی سا

کون کہہ گیا ہے موت ٹوٹنے سے آتی ہے
گل نے تو بکھر کے باغ کر دیا گلابی سا

پھر ہوا چلی شاید بھولے بسرے خوابوں کی
دل میں اٹھ رہا ہے کچھ شوق اضطرابی سا

تلخیوں نے پھر شاید اک سوال دوہرایا
گھل رہا ہے ہونٹوں میں ذائقہ جوابی سا

حرف پیار کے سارے آ گئے تھے آنکھوں میں
جب لیا تھا ہاتھوں میں چہرہ وہ کتابی سا

بوند بوند ہوتی ہے رنگ و نور کی بارش
جب بھی موسم آیا ہے نیناں میں شرابی سا


مرگِ انتظار


تو نہ آتا تو یہ خواب
اور کچھ دن یونہی زندہ رہتے
اور کچھ دن یونہی آنکھوں میں سجاتے
ترے چہرے کے نقوش
اور کچھ دن یونہی سینے میں ترے نام کی دھڑکن رہتی
اور کچھ دن یونہی لمحہ لمحہ
تار مژگاں پہ پروتے تری چاہت کے ستارے
تری خواہش کے حسیں رنگ
ترے لمسِ تصور کے کنول
اب جو تو لوٹ کے آیا ہے تو آنکھوں میں تری یاد
نہ چاہت کے ستارے ہیں
نہ خواہش کے حسیں رنگ
نہ پلکوں پہ ترے لمسِ تصور کے کنول ہیں
فقط اک نم ہے، نم شیشۂ جاں


مری جان ، میری متاع جاں



!مری جان ، میری متاع جاں
تجھے یاد ہے؟
ترے ساتھ جتنے بھی ماہ و سال گزر گئے
مری جلتی بجھتی نگاہ میں سبھی ریزہ ریزہ اتر گئے
وہ جو حرف تھے مرے آنکھ میں
وہ جو آنسوؤں کے گلاب تھے
مرے درد تھے، مرے خواب تھے
مری چاہتوں کے سراب تھے
وہ فراق تھا کہ وصال تھا جو ترے خیال میں ڈھل گیا
کوئی تیر تھا جو جگر کے پار نکل گیا
یہ جو حرف حرف خیال ہیں
یہ جو برف برف وصال ، ہجر مثال ہیں
انھیں کون خیمہ خواب عمر میں راہ دے
انھیں کون حجلۂ جان و دل میں پناہ دے
کوئی اور کیوں انھیں اپنے قرب کی چاہ دے
کوئی اور کیوں ترے جسم اور مرے وجود کے درمیان ٹھہر سکے
فقط ایک میں ، فقط ایک تو
اسی کرب خواب کا ماحصل ہیں تو کس لیے
کوئی اور ہے جو ترے وجود، مرے خیال کے
درمیاں ہے رُکا ہوا
مگر آج تک مری آنکھ میں اسی ایک حرف کا
اضطراب ابد گماں ہے رُکا ہوا
وہی ایک حرف جو تیرے اور مرے ہجر کے مہ و سال کا
کوئی عکس ہے
کہ ترے فریب جمال کا کوئی عکس ہے
مگر اے مرے دل و جاں کے ہمدم و مہرباں
تجھے یاد ہے؟
کہیں ماہ و سال کے اس طرف
وہ جو کتنے ہی مہ و سال تھے
وہ گزر گئے مگر آج تک
تجھے کیا خبر!
تری یاد میں، تری چاہ میں، کوئی آنکھ دل سے بھری رہی
مگر آج تک تری آنکھ میں وہی ایک بے خبری رہی

تیرے لیے میں ساری عمر گنوا سکتا ہوں



تیرے لیے میں ساری عمر گنوا سکتا ہوں
تو کہہ دے تو یہ دھوکہ بھی کھا سکتا ہوں

تیری چاہت کے جذبوں کی خوشبو لے کر
بجھی ہوئی شاموں کو بھی مہکا سکتا ہوں

لمحوں کے پرکیف سکوت پہ حیراں کیوں ہے
تیرے لیے میں صدیوں کو ٹھہرا سکتا ہوں

کبھی کبھی تو یوں لگتا ہے، تیری خاطر
جنگل کے اس پار اکیلا جا سکتا ہوں

دھول اڑاتی آنکھوں میں جذبوں کو بہا کر
دریاؤں کو صحراؤں میں لا سکتا ہوں

خالد اپنے جذبوں کی زرخیزی سے میں
کشت سخن میں ہریالی مہکا سکتا ہوں

تو نے مری وفا کے عوض کچھ درد مثال خیال دیے




تو نے مری وفا کے عوض کچھ درد مثال خیال دیے
میں نے وہی خیال ترے اس ہجر کی لے میں ڈھال دیے

وقت کے آتشدان میں تو نے میرے عکس جلا ڈالے
میں نے بھی اپنے دیوان سے کتنے شعر نکال دیے

ہجر زدہ سب دیکھ رہے ہیں آئینوں کو حیرت سے
کیسے کیسے ان چہروں کو وقت نے خد و خال دیے

دل زدگاں کیوں صحرا صحرا خاک اڑاتے پھرتے ہیں
کس نے ان کے پاؤں میں یہ وحشت کے چکر ڈال دیے

ڈھونڈ رہے ہیں ہم ان کا حل اپنے بے حس چہروں میں
نئے زمانے نے انسان کو جتنے نئے سوال دیے

اس کے تغافل سے ہو گلہ کیا، جس نے میرے شعروں کو
پھول کی خوشبو، چاند کی ٹھنڈک، لفظوں کے سرتال دیے

ڈھلتے ڈھلتے رات ڈھلی تو تاریکی کچھ اور بڑھی
جلتے جلتے بجھ گئے خالد کتنے ماہ مثال دیے

Monday, 28 January 2013

عشق میں بہتا ہے جو دریا بہ دریا، کون ہے


عشق میں بہتا ہے جو دریا بہ دریا، کون ہے
ہم بھی دیکھیں، درد کے صحرا میں ایسا کون ہے


ایک لمحہ ہی گزر جائے کہیں تیرے بغیر
دل کو سمجھایا تو ہے، لیکن سمجھتا کون ہے


میری بے آواز تنہائی بتائے کیا مجھے
شہر میں ہے جس کی خاطر شور برپا، کون ہے


سر پہ یہ جلتے ہوئے سورج کو اندازہ نہیں
بے طلب اس دشت میں گھر سے نکلتا کون ہے


کھو گئی ہے وقت کی لہروں میں سچائی تو کیا
وقت ہی خود فیصلہ کرتا ہے، سچا کون ہے


ایک سے اس شہر میں ہیں آشنا ناآشنا
کیا بتائیں تجھ کو میری جاں کہ کیسا کون ہے


دن کا سورج کیا اٹھائے گا مری راتوں کا غم
اور پھر خالد کسی کا بوجھ اٹھاتا کون ہے


اسے کیا خبر کہ پلک پلک روش ستارہ گری رہی



اسے کیا خبر کہ پلک پلک روش ستارہ گری رہی
اسے کیا خبر کہ تمام شب کوئی آنکھ دل سے بھری رہی

کوئی تار تار نگاہ بھی تھی صد آئنہ، اسے کیا خبر
کسی زخم زخم وجود میں بھی ادائے چارہ گری رہی

میں اسیر شام قفس رہا مگر اے ہوائے دیارِ دل
سرِ طاقِ مطلعِ آفتاب مری نگاہ دھری رہی

سفر ایک ایسا ہوا تو تھا کوئی ساتھ اپنے چلا تو تھا
مگر اس کے بعد تو یوں ہوا نہ سفر نہ ہم سفری رہی

وہ جو حرفِ بخت تھا لوحِ جاں پہ لکھا ہوا، نہ مٹا سکے
کفِ ممکنات پہ لمحہ لمحہ ازل کی نقش گری رہی

ترے دشتِ ہجر سے آ چکے بہت اپنی خاک اڑا چکے
وہی چاک پیرہنی رہا وہی خوئے دربدری رہی

وہی خواب خواب حکایتیں وہی خالد اپنی روایتیں
وہی تم رہے وہی ہم رہے وہی دل کی بے ہنری رہی

مرے چہرے کے پیچھے عکس اس کا جاگتا ہے


مرے چہرے کے پیچھے عکس اس کا جاگتا ہے
کہ آئینے میں اک منظر پرانا جاگتا ہے


ذرا تم چاند کی مشعل کو گل کرنے سے پہلے
فلک پر دیکھنا لینا، کوئی تارا جاگتا ہے؟


یہ آنسو رک سکیں تو روک لو، بہتر یہی ہے
جب آنسو خشک ہو جائیں تو دریا جاگتا ہے


اچانک داستان وصل اس نے ختم کر دی
فقط یہ دیکھنے کو، کون کتنا جاگتا ہے


فضا خاموش ہے اور رات کے بستر پہ خالد
زمیں سے آسماں تک کوئی گریہ جاگتا ہے


مرے لہو میں تسلسل ترے خیال کا تھا



اک انتخاب وہ یادوں کے ماہ و سال کا تھا
جو حرف ابر زدہ آنکھ میں ملال کا تھا
شکست آئنۂ جاں پہ سنگ زن رہنا
ہنر اسی کا تھا، جتنا بھی تھا، کمال کا تھا
یہ دیکھنا ہے کہ کھل کر بھی بادباں نہ کھلے
تو اس سے کتنا تعلق ہوا کی چال کا تھا
قبائے زخم کی بخیہ گری سے کیا ہوتا
مرے لہو میں تسلسل ترے خیال کا تھا
پرانے زخم بھی خالد! مرے، ادھیڑ گیا
جو ایک زخم، کف جاں پہ پچھلے سال کا تھا

Sunday, 27 January 2013

میں نے راتوں کو بہت سوچا ہے تم بھی سوچنا



میں نے راتوں کو بہت سوچا ہے تم بھی سوچنا
فیصلہ کن موڑ آ پہنچا ہے تم بھی سوچنا

سوچنا ممکن ہے کیسے اس جدائی کا علاج ؟
حال ہم دونوں کا اک جیسا ہے تم بھی سوچنا

پل تعلق کا شکستہ کیوں ہوا ؟سوچوں گا
دور نیچےہجر  کا دریا ہے تم بھی سوچنا

کس قدر برہم لہریں ،سوچ کر آتا ہے خوف
اور پانی کس قدر گہرا ہے تم بھی سوچنا

اپنے شب و روز گزر سکتے ہیں کس طرح
تجربہ میرا بھی یہ پہلا ہے تم بھی سوچنا

ہاں نہ کہ درمیانی راستے پر بیٹھ کر
کس کے حق میں کیا نہیں اچھا ہے تم بھی سوچنا

Friday, 25 January 2013

Shehar Ka Shehar 'MUSALMAN' Hua Phirta Hai


Kesi Bakhshish Ka Yeh Samaan Hua Phirta Hai 
Shehar Saara Hi Pareshan Hua Phirta Hai

Ek Barood Ki Jecket aur Naara e Takbeer
Rasta Jannat Ka Aasan Hua Phirta Hai

Kaisa Ishq Hai, Terey Naam Pey Qurban Hai Magar
Teri Har Baat Sey Anjaan Hua Phirta Hai

Shab Ko Shaitan Bhi Mangay Hai Panahen Jis Sey
Subh Ko Wo Sahib e Emaan Hua Phirta Hai

Janay Kab Kon Kisey Maar dey "Kafir" Keh Kar
Shehar Ka Shehar 'MUSALMAN' Hua Phirta Hai

Monday, 21 January 2013

دعا دعا وہ چہرہ حیا حیا وہ آنکھیں




دعا دعا وہ چہرہ
حیا حیا وہ آنکھیں
صبا صبا وہ زلفیں
چلے لہو گردش میں
رہے آنکھ میں دل میں
بسے مرے خوابوں میں
جلے اکیلے پن میں
مِلے ہر اک محفل میں
دعا دعا وہ چہرہ
کبھی کسی چلمن کے پیچھے
کبھی درخت کے نیچے
کبھی وہ ہاتھ پکڑتے
کبھی ہوا سے ڈرتے
کبھی وہ بارش اندر
کبھی وہ موج سمندر
کبھی وہ سورج ڈھلتے
کبھی وہ چاند نکلتے
کبھی خیال کی رَو میں
کبھی چراغ کی لَو میں
دعا دعا وہ چہرہ
حیا حیا وہ آنکھیں
صبا صبا وہ زلفیں

دعا دعا وہ چہرہ
کبھی بال سکھائے آنگن میں
کبھی مانگ نکالے درپن میں
کبھی چلے پون کے پاؤں میں
کبھی ہنسے دھوپ میں چھاؤں میں
کبھی پاگل پاگل نینوں میں
کبھی چھاگل چھاگل سینوں میں
کبھی پھولوں پھول وہ تھالی میں
کبھی دیوں بھری دیوالی میں
کبھی سجا ہوا آئینے میں
کبھی دعا بنا وہ زینے میں
کبھی اپنے آپ سے جنگوں میں
کبھی جیون موج ترنگوں میں
کبھی نغمہ نور فضاؤں میں
کبھی مولا حضور دعاؤں میں
کبھی رکے ہوئے کسی لمحے میں
کبھی دکھے ہوئے کسی چہرے میں
وہی چہرہ بولتا رہتا ہوں
وہی آنکھیں سوچتا رہتا ہوں
وہی زلفیں دیکھتا رہتا ہوں
دعا دعا وہ چہرہ
حیا حیا وہ آنکھیں
صبا صبا وہ زلفیں

Main aur merii aavaaragii
















Phirtey hain kab sey dar'badar, ab is nagar ab us nagar
ek duusarey k hamsafar, main aur merii aavaaragii
naa aashanaa har rahguzar, naa meharbaaN hai ek nazar
jaayen to ab jaayen kidhar, main aur merii aavaaragii …….

ham bhii kabhii aabaad they aisey kahaaN bar_baad thay
be'fikr they aazaad they masruur they dil_shaad thay
vo chaal aisi chal gayaa ham bujh gaye dil jal gayaa
nikley jalaa k apnaa ghar main aur merii aavaaragii…

vo maah-e-vash vo maah-e-ruuh vo maah-e-kaamil huu'bahuu
thiin jis kii baaten kuu_ba_kuu us sey ajab thii guftaguu
phir yuuN huaa vo kho gaii aur mujh ko zid sii ho gaii
laayen gey us ko DhuuND kar main aur merii aavaaragii …….

ye dil hii thaa jo seh gayaa, wo baat aisii keh gayaa
kehney ko phir kyaa reh gayaa ashkon kaa dariyaa beh gayaa
jab keh kar wo dilbar gayaa, terey liye main mar gayaa
rotey hain us ko raat bhar, main aur merii aavaaragii ………

ab Gham utahaayen kis liye, yeh dil jalaayen kis liye
aaNsuu bahaayen kis liye, yuuN jaaN gavaayen kis liye
peshaa na ho jis kaa sitam, DhuuNden gey ab aisaa sanam
hon gey kahiin to kaar_gar, main aur merii aavaaragii

jab ham_dam-o-ham_raaz thaa, tab aur hii andaaz thaa
ab soz hai tab saaz thaa, ab sharm hai tab naaz thaa
ab mujh sey ho to ho bhii kyaa, hai saath vo to vo bhii kyaa
ek be'hunar ek be'sabar, main aur merii avragiiiii……..


Sunday, 20 January 2013

شاید وہم تھا میرا


میں کب سے
بے یقینی اور دکھ کی آخری حد پہ کھڑی
بس تک رہی ہوں اپنے ہاتھوں کو
کہ جس میں
بس زرا سی دیر پہلے ہی
ہماری دوستی کے کتنے خوش رنگ
اور
کتنے قیمتی موتی دھرے تھے
ہمارے بیچ پھیلے
اعتماد و پیار کے موسم کا ہر ایک رنگ
سجا تھا میرے ہاتھوں میں
(یا شاید وہم تھا میرا)
مگر اب
کچھ نہیں 
بس ہاتھ خالی ہیں

کہا اس نے مجھے بس بد دعا سے خوف آتا ہے


کہا اس نے کہ جب تک دل ہے تب تک میں تمہارا ہوں

کہا میں نے کہ دل کا کیا ہے دل تو بھر بھی سکتا ہے


کہا اس نے مری مجبوریاں کیا تم سمجھتی ہو,,,؟

کہا میں نے مجھے بس روح دیدو جسم بے معنی


کہا اس نے تمہاری شد توں سے خوف آتا ہے


کہا میں نے مجھے مرنے سے بالکل ڈر نہیں لگتا 



کہا اس نے مرا مطلب نہیں تھا وہ جو سمجھی ہو


کہا میں نے محبت میں بھلا مطلب کہاں شامل



کہا اس نے مری آواز پر تم آسکو گی کیا


کہا میں نے بھلا خود کو کوئی آواز دیتا ہے,,, ؟



کہا اس نے سنو تم خوش رہو بس یہ کہوں گا میں


کہا میں نے تمہارا نام میری ہر خوشی ٹہرا



کہا اس نے مجھے بس بد دعا سے خوف آتا ہے


کہا میں نے مری تو ہر دعا میں تم ہی ہوتے ہو



کہا اس نے چلو چھوڑو ابھی جلدی ہے چلتا ہوں


کہا میں نے مری آنکھیں تمہاری منتظر ہوں گی



کہا اس نے عجب پاگل ہو ’ ہو سکتا ہے نا آئوں


کہا میں نے یہی رشتہ تو ہے سانسوں کا جیون سے


کہا اس نے مرے جانے کے دکھ میں تم نہیں رونا


کہا میں نے بنا مہتاب کے راتیں بھی روتی ہیں



کہا اس نے تمہاری چاہتوں کو آزمائوں تو


کہا میں نے دعا کرنا قیامت ہو تو تم آئو



کہا اس نے مری خاطر نصیبوں سے لڑو گی کیا


کہا میں نے مقدر سے دعائیں جیت سکتی ہیں



کہا اس نے غمِ دنیا بہت ہے لڑ کے آتا ہوں


کہا میں نے محبت ڈھال ہو تو جیت قسمت ہے



کہا اس نے چراغوں کو بجھا دو جا رہا ہوں میں


کہا میں نے فقط آنکھیں بجھیں گی اشک جلتے ہیں



تمہاری انجمن سے اٹھ کے دیوانے کہاں جاتے


تمہاری انجمن سے اٹھ کے دیوانے کہاں جاتے
جو وابستہ ہوئے تم سے وہ افسانے کہاں جاتے

نکل کر دیر و کعبہ سے اگر ملتا نہ مے خانہ
تو ٹھکرائے ہوئے انساں خدا جانے کہاں جاتے

تمہاری بے رخی نے لاج رکھ لی بادہ خانے کی
تم آنکھوں سے پلا دیتے تو پیمانے کہاں جاتے

چلو اچھا ہوا، کام آگئی دیوانگی اپنی
وگرنہ ہم زمانے بھر کو سمجھانے کہاں جاتے

قتیل اپنا مقدّر غم سے بیگانہ اگر ہوتا
تو پھر اپنے پرائے ہم سے پہچانے کہاں جاتے


میری چشمِ تمنا میں خواب اُس کے ہیں


گزر رہے ہیں جو مجھ پر عذاب اُس کے ہیں
کہ میری چشمِ تمنا میں خواب اُس کے ہیں

میں زخم زخم ہوں میرا نصیب ہیں کانٹے
وہ رنگ رنگ ہے سارے گلاب اُس کے ہیں

کتاب میری،قلم میرا،سوچ بھی میری
مگر جو لکھے میں نے وہ باب اُس کے ہیں

نہیں ہے مرے مقدر کا ایک بھی تارا
یہ کہکشاں یہ ماہ و آفتاب اُس کے ہیں

وصال و ہجر کا موسم اُسی کا موسم ہے
سوال میرے ہیں شاید جواب اُس کے ہیں

وہ میری ذات کا ایک مستند حوالہ ہے
کتابِ عشق کے سارے نصاب اُس کے ہیں

میں حیرتوں کے سمندر میں غرق ہوں اعجاز
تمام عکس سرِ سطحِ آب اُس کے ہیں


Saturday, 19 January 2013

شانے پہ میرے ہاتھ تمھارا تھا اور بس


پلکوں پہ اُس کے ایک ستا را تھا اور بس
زادِ سفر یہی تو ہمارا تھا اور بس

بنجر سماعتو ں کی زمیں کیسے کِھل اُٹھی
تم نے تو مِیرا نام پکارا تھا اور بس

میری فصیلِ ذات پہ چھایا کُہر چھٹا
آنکھوں میں اسکے ایک شرارا تھا اور بس

اِک عمر میری ذات پہ سا یہ فگن رہا
کچھ وقت ہم نے سا تھ گزارا تھا اور بس

تاریکیوں میں نُور کی بارش سی ہو گئی
آنکھوں میں تِیرا عَکس اُتارا تھا اور بس

مجھ تک پہنچتا غم کا ہر دریا پلٹ گیا
شانے پہ میرے ہاتھ تمھارا تھا اور بس


اج آکھاں وراث شاہ نوں کِتوں قبراں وچوں بول



اج آکھاں وراث شاہ نوں کِتوں قبراں وچوں بول
...تے فیر کتابِ عشق دا کوئی اگلا ورقا پھول
اک روئی سی دھی پنجاب دی تو لِکھ لِکھ مارے وين
اج لکھاں دھياں روندياں تينوں وارث شاہ نوں کین
اٹھ دردمنداں دیا درديا اٹھ تک اپنا پنجاب
اج بيلے لاشاں وچھياں تے لہو دی بھری چناب
کسے پنجاں پانیاں وچ دتی زہر رلا
تے انہاں پانیاں دھارت نوں دتا پانی لا
اس ذرخیز زمین دے لوں لوں پھوٹیا زھر
گٹھ گٹھ چڑھیاں لالیاں فٹ فٹ چڑھیا قہر
اوہنے ہر اک ونس دی دتی ناگ بنا
اس ھر اک وسدی ونجالی دتی ناگ بنا
پہلا ڈنگ مداریاں، منتر گۓ گواچ
دوجے ڈنگ دی لگ گئ جانے کاہنوں لاگ
پلو پلی پنجاب دی نیلے پے گۓ انج
ّگلیوں ٹٹے گیت فیر تکیلیوں ٹٹی تاند
ترنجاں نوں ٹٹیاں سہیلیاں چرخے گوکر بند
سانے سیج دی بیریاں لڈن دتیاں روڑ
سان ڈالیاں پینگ اج پپلاں دتی توڑ
جتھے وجدی سی پھوک پیار دی وی او ونجھلی گئ گواچ
رانجھے دے سب ویر بھل گۓ اودھی جاچ
دھرتی تےلہو ورسیا قبراں پیاں چون
پریت دیاں شاہزادیاں اج وچ مزاراں رون
اج سبھے کيدو بن گئے ايتھے حُسن عشق دے چور
اج کتھوں لياواں لبھ کے ميں وارث شاہ جيا ہور
Today, I call Waris Shah, “Speak from your grave”
And turn, today, the book of love’s next affectionate page
Once, a daughter of Punjab cried and you wrote a wailing saga
Today, a million daughters, cry to you, Waris Shah
Rise! O’ narrator of the grieving; rise! look at your Punjab
Today, fields are lined with corpses, and blood fills the Chenab
Someone has mixed poison in the five rivers’ flow
Their deadly water is, now, irrigating our lands galore
This fertile land is sprouting, venom from every pore
The sky is turning red from endless cries of gore
The toxic forest wind, screams from inside its wake
Turning each flute’s bamboo-shoot, into a deadly snake
With the first snakebite; all charmers lost their spell
The second bite turned all and sundry, into snakes, as well
Drinking from this deadly stream, filling the land with bane
Slowly, Punjab’s limbs have turned black and blue, with pain
The street-songs have been silenced; cotton threads are snapped                                                     
Girls have left their playgroups; the spinning wheels are cracked                                                                  
Our wedding beds are boats their logs have cast away
Our hanging swing, the Pipal tree has broken in disarray
Lost is the flute, which once, blew sounds of the heart
Ranjha’s brothers, today, no longer know this art
Blood rained on our shrines; drenching them to the core
Damsels of amour, today, sit crying at their door
Today everyone is, ‘Kaido;’ thieves of beauty and ardour
Where can we find, today, another Warish Shah, once more
Today, I call Waris Shah, “Speak from your grave”
And turn, today, the book of love’s next affectionate page 
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets