Friday, 31 August 2012

Tujhay Bhoolnay Ki Dua Karoon To Meri Dua Men Asar Na Ho



Kabhi yun bhi aa meri aankh men keh meri nazar ko khabar na ho
Mujhey ek raat navaaz dey magar us k baad sehar na ho

Vo barra raheem-o-kareem hai mujhey yeh sifat bhi ataa karey
Tujhey bhoolney ki duaa karun to duaa men meri asar na ho

Merey baazuon men thaki thaki , abhi mehav-e-khvaab hai chandni
Na uthey sitaron ki paalki, abhi aahaton kaa guzar na ho

Vo firaaq ho yaa visaal ho, teri yaad mehakay gi ek din
Vo gulab ban k khiley ga kayaa, jo chirag ban k jalaa na ho

Kabhi dhoop dey, kabhi badaliyan, dil-o-jaan sey donon qubool hain
Magar us nagar men na qaid kar jahan zindagi ki havaa na ho

Kabhi din ki dhoop men jhoom k kabhi shab k phool ko choom k
Yun hi saath saath chalein sadaa kabhi khatm apnaa safar na ho

Merey paas merey habib aa zara aur dil k qareeb aa
Tujhey dharkanon men basaa luun main keh bicharney ka kabhi darr na ho


Khuda Karay Keh Meri Arz e Paak Pay Utray

[IMG]

Wednesday, 29 August 2012

یہ تُو ہے کہ میرا واہمہ ہے!



منظر ہے وہی ٹھٹک رہی ہوں

حیرت سے پلک جھپک رہی ہوں

یہ تُو ہے کہ میرا واہمہ ہے!
بند آنکھوں سے تجھ کو تک رہی ہوں

جیسے کہ کبھی نہ تھا تعارف
یوں ملتے ہوئے جھجک رہی ہوں

پہچان! میں تیری روشنی ہوں
اور تیری پلک پلک رہی ہوں

کیا چَین ملا ہے………سر جو اُس کے
شانوں پہ رکھے سِسک رہی ہوں

پتّھر پہ کھلی ، پہ چشمِ گُل میں
کانٹے کی طرح کھٹک رہی ہوں

جگنو کہیں تھک کے گرِ چُکا ہے
جنگل میں کہاں بھٹک رہی ہوں

گڑیا مری سوچ کی چھنی کیا
بچّی کی طرح بِلک رہی ہوں

اِک عمر ہُوئی ہے خُود سے لڑتے
اندر سے تمام تھک رہی ہوں

رس پھر سے جڑوں میں جا رہا ہے
میں شاخ پہ کب سےپک رہی ہوں

تخلیقِ جمالِ فن کا لمحہ!
کلیوں کی طرح چٹک رہی ہوں

گلاب ہاتھ میں ہو ، آنکھ میں ستارہ ہو



گلاب ہاتھ میں ہو ، آنکھ میں ستارہ ہو

کوئی وجود محبّت کا استعارہ ہو

میں گہرے پانی کی اس رو کے ساتھ بہتی رہوں
جزیرہ ہو کہ مقابل کوئی کنارہ ہو

کبھی کبھار اُسے دیکھ لیں ،کہیں مل لیں
یہ کب کہا تھا کہ وہ خوش بدن ہمارا ہو

قصور ہو تو ہمارے حساب میں لکھ جائے
محبتوں میں جو احسان ہو ، تمھارا ہو

یہ اتنی رات گئے کون دستکیں دے گا
کہیں ہوا کا ہی اُس نے نہ رُوپ دھارا ہو

اُفق تو کیا ہے،درِ کہکشاں بھی چُھو آئیں
مُسافروں کو اگر چاند کا اشارہ ہو

میں اپنے حصے کے سُکھ جس کے نام کر ڈالوں
کوئی تو ہو جو مجھے اس طرح کا پیارا ہو

اگر وجود میں آہنگ ہے تو وصل بھی ہے
میں چاہے نظم کا ٹکڑا، وہ نثر پارہ ہو

Muhabbat jurm sar'zad ho gaya mujh sey,saza likh do



Muhabbat jurm sar'zad ho gaya mujh sey,saza likh do,
Shareek e jurm lekin kis tarah sey bach gaya likh do

Mujhay is teergi men kuch sujhaayee hi nahi deyta,
Tum in palkon pay koi timtimata sa diya likh do

Zuban ko izn e junbash hi nahi,rokoon tumhein kaisay?
meri aankhon men koi bheegti si ilteja likh do

Nasaab e dil men tum ney yuun tou sab kuch likh dia lekin,
Jigar sey roshnayee lay k ab is men wafa likh do


Tumhari aankh men apna muqadar parrh liya mein ney,
Issay meri jabeen par bhi,tum aa kar ab zara likh do

Yeh phailay tou zameen o aasmaan ki wusat'ein kum hain,
Samaito aik nuktay men tou dil ko KARBALA likh do

Khuda bhi rad karay tou aik lamhay kay liye sochay,
Batool,apnay labon par tum,koi aysi dua likh do

بتاؤ دل کی بازی میں بھلا کیا بات گہری تھی ؟



بتاؤ دل کی بازی میں بھلا کیا بات گہری تھی ؟
کہا، یُوں تو سبھی کچھ ٹھیک تھا پر مات گہری تھی
...
سُنو بارش ! کبھی خود سے بھی کوئی بڑھ کے دیکھا ہے؟
جواب آیا،اُن آنکھوں کی مگر برسات گہری تھی

سُنو، پیتم نے ہولے سے کہا تھا کیا، بتاؤ گے؟
جواب آیا، کہا تو تھا مگر وہ بات گہری تھی

دیا دل کا سمندر اُس نے ،تُم نے کیا کیا اُس کا؟
ہمیں بس ڈوب جانا تھا کہ وہ سوغات گہری تھی

نظر آیا تمہیں اُس اجنبی میں کیا بتاؤ گے؟
سُنو، قاتل نگاہوں کی وہ ظالم گھات گہری تھی

مل جائے سر راہ جو بچھڑا ہوا کوئی



یوں دل کو ہر اک شخص پہ وارا نہیں کرتے
آنکھوں میں ہر اک عکس اتارا نہیں کرتے

ہونی ہے تو اک بار ہی ہو جائے محبت
یہ بھول ہے ایسی کہ دوبارہ نہیں کرتے

اچھا ہوا میں نے ہی فقط دیکھا مگر یوں
محفل میں کسی کو بھی اشارہ نہیں کرتے

مل جائے سر راہ جو بچھڑا ہوا کوئی
چپ چاپ ہی تکتے ہیں پکارا نہیں کرتے

کیوں پیار کی بازی سے ہو اس درجہ گریزاں 
کہتے ہیں کہ دل ہار کے ہارا نہیں کرتے

کاجل سے بھی اب کام کوئی لے نا سہیلی!
یوں درد سے آنکھوں کو سنوارا نہیں کرتے

محبت اپنا اپنا مسئلہ ہے

چونکی ہوں تو دیکھا کہ وہ ہمراہ نہیں ہے




جاگیں گے کسی روز تو اس خوابِ طرب سے
ہم پھول ہی چنتے رہے باغیچہء شب سے

jaagain gay kisi roz to khawab e tarb say
hum phool he chuntay rahay baghicha e shab say

پھر ایک سفر اور وہی حرفِ رفاقت
سمجھے تھے، گزر آئے ہیں ہم تیری طلب سے

phir aik safar aur wohi harf e rafaqat
samjhay thay,guzar aaye hain hum teri talab say

خوش دل ہے اگر کوئی تو کیا اُس کا یہاں کام
یہ بارگہِ غم ہے، قدم رکھو ادب سے

khush dil hai agar koi to kaya uska yahan kaam
yeh baargah e gham hai, qadam rakho adab say

اب موسم ِ جاں سے بھی یقیں اٹھنے لگا ہے
دیکھا ہے تجھے رنگ بدلتے ہوئے جب سے

ab mosam e jaan say bhi yakeen uthnay laga hai
dekha hai tujhay rang badaltay huay jab say

یاں بھی وہی بیگا نہ روی، اپنے خدا سی
مانگی جو کبھی کوئی دعا شہر کے رب سے

yaan bhi wohi begana rawi apnay khuda si
maangi jo kabhi koi dua shehar kay rab say

چونکی ہوں تو دیکھا کہ وہ ہمراہ نہیں ہے
الجھن میں ہوں کس بات پہ، کس موڑ پہ، کب سے

chonki hoon to dekha keh woh hamraah nhi hai
uljhan men hoon kis baat pay,kis morr pay, kab say


یہ درخورِ ہنگامہ تو پہلے بھی کہاں تھی
ہول آئے مگر آج تو ویرانی ءِ شب سے

yeh darkhor e hangama to pehlay bhi kahan thi
haul aaye magar aaj to veerani e shab say

کچھ، دوست بھی مصروف زیادہ ہوئے اور کچھ
ہم دور ہیں ، افسردگی ءِ دل کے سبب سے

kuch dost bhi masroof zayada huay aur kuch
hum door hain, afsurdagi e dil kay sabab say

اس کی مٹھی میں بہت روز رہا میرا وجود



اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے

کون ہو گا جو مجھے اس کی طرح یاد کرے

دل عجب شہر کہ جس پر بھی کھلا در اس کا
وہ مسافر اسے ہر سمت سے برباد کرے

اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں
روز اِک موت نئے طرز کی ایجاد کرے

اتنا حیراں ہو مری بے طلبی کے آگے
واقفس میں کوئی در خود میرا صیاد کرے

سلب بینائی کے احکام ملے ہیں جو کبھی
روشنی چھونے کی خواہش کوئی شب زاد کرے

سوچ رکھنا بھی جرائم میں ہے شامل اب تو
وہی معصوم ہے ہر بات پہ جو صاد کرے

جب لہو بول پڑے اس کی گواہی کے خلاف
قاضی شہر کچھ اس بات میں ارشاد کرے

اس کی مٹھی میں بہت روز رہا میرا وجود
میرے ساحر سے کہو اب مجھے آزاد کرے

یہ سانحہ بھی محبت میں بارہا گزرا



تیرے خیال سے لو دے اُٹھی ہے تنہائی 
شبِ فراق ہے یا تیری جلوہ آرائی 

تُو کس خیال میں ہے منزلوں کے شیدائی 
انہیں بھی دیکھ جنہیں راستے میں نیند آئی 

پکار اے جرسِ کاروانِ صبح طرب 
بھٹک رہے ہیں اندھیروں میں تیرے سودائی 

ٹھہر گئے ہیں سرِراہ خاک اڑانے کو 
مسافروں کو نہ چھیڑ اے ہوائے صحرائی 

رہِ حیات میں کچھ مرحلے تو دیکھ لیے 
یہ اور بات تری آرزو نہ راس آئی 

یہ سانحہ بھی محبت میں بارہا گزرا 
کہ اس نے حال بھی پوچھا تو آنکھ بھر آئی 

دل افسردہ میں پھر دھڑکنوں کا شور اٹھا 
یہ بیٹھے بیٹھے مجھے کن دنوں کی یاد آئی 

کھلی جو آنکھ تو کچھ اور ہی سماں دیکھا 
وہ لوگ تھے نہ وہ جلسے نہ شہر رعنائی 

پھر اس کی یاد میں دل بے قرار ہے ناصر 
بچھڑ کے جس سے ہوئی شہر شہر رسوائی

ہر ایک چہرے پہ دل کو گُمان اس کا تھا



ہر ایک چہرے پہ دل کو گُمان اس کا تھا 
بسا نہ کوئی یہ خالی مکان اس کا تھا 

میں بے جہت ہی رہا اور بے مقام سا وہ 
ستارہ میرا سمندر نشان اس کا تھا 

میں اُس طلسم سے باہر کہاں تلک جاتا 
فضا کھلی تھی مگر آسمان اس کا تھا 

سلیقہ عشق میں جاں اپنی پیش کرنے کا 
جنہیں بھی آیا تھا ان کو ہی دھیان اس کا تھا 

پھر اس کے بعد کوئی بات بھی ضروری نہ تھی 
مرے خلاف سہی وہ بیان اس کا تھا 

ہوا نے اب کے جلائے چراغ رستے میں 
کہ میری راہ میں عادل مکان اس کا تھا

بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا



بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا
اِک آگ سی جذبوں کی دہکائے ہوئے رہنا

چھلکائے ہوئے چلنا خوشبو لبِ لعلیں کی
اک باغ سا ساتھ اپنے مہکائے ہوئے رہنا

اس حسن کا شیوہ ہے جب عشق نظر آئے
پردے میں چلے جانا، شرمائے ہوئے رہنا

اک شام سی کر رکھنا کاجل کے کرشمے سے
اک چاند سا آنکھوں میں چمکائے ہوئے رہنا

عادت ہی بنا لی ہے تم نے تو منیر اپنی
جس شہر میں بھی رہنا اکتائے ہوئے رہنا

خدا کرے کہ مری ارض پاک پر اترے



خدا کرے کہ مری ارض پاک پر اترے
وہ فصلِ گل جسے اندیشۂ زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کِھلا رہے برسوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اُگے وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

گھنی گھٹائیں یہاں ایسی بارشیں برسائیں
کہ پتھروں کو بھی روئیدگی محال نہ ہو

خدا کرے نہ کبھی خم سرِ وقارِ وطن
اور اس کے حسن کو تشویشِ ماہ و سال نہ ہو

ہر ایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوجِ کمال
کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ مرے اک بھی ہم وطن کے لیے
حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

جھلملاتے ہوئے اشکوں کی لڑی ٹوٹ گئی



محفلیں لُٹ گئیں جذبات نے دم توڑ دیا
ساز خاموش ہیں نغمات نے دم توڑ دیا

ہر مسرت غمِ دیروز کا عنوان بنی 
وقت کی گود میں لمحات نے دم توڑ دیا 

اَن گِنت محفلیں محرومِ چراغاں ہیں ابھی 
کون کہتا ہے کہ ظلمات نے دم توڑدیا 

اَن گِنت محفلیں محرومِ چراغاں ہیں ابھی 
کون کہتا ہے کہ ظلمات نے دَم توڑدیا 

آج پھر بُجھ گئے جَل جَل کے امیدوں کے چراغ 
آج پھر تاروں بھری رات نے دَم توڑدیا 

جن سے افسانۂ ہستی میں تسلسل تھا کبھی 
اُن محبّت کی روایات نے دم توڑدیا 

جھلملاتے ہوئے اشکوں کی لڑی ٹوٹ گئی 
جگمگاتی ہوئی برسات نے دم توڑ دیا 

ہائے آدابِ محبّت کے تقاضے ساغر 
لب ہلے اور شکایات نے دم توڑدیا 

رُودادِ محبّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کچھ بھول گئے



رُودادِ محبّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کچھ بھول گئے 
دو دِن کی مُسرّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں 
اِک ہوش کی ساعت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گیے 

اب وقت کے نازک ہونٹوں پر مجروح ترنّم رقصاں ہے 
بیدادِ مشیّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے

احساس کے میخانے میں کہاں اَب فکر و نظر کی قندیلیں
آلام کی شِدّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے 

کُچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کُچھ ماضی کے عیّار سجن 
احباب کی چاہت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے 

کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دِل شبنم سے سُلگتی ہیں پلکیں 
پُھولوں کی سخاوت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے 

اب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے 
دُنیا کی کی حقیقت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے 

Tum Agar Younhi Nazrain Milatay Rahay


Tum Agar Younhi Nazrain Milatay Rahay May Kashi Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi
Aur Yeh Silsila Mustakil Ho To Phir Be'khudi Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi

Aik Zamaney Kay Bad Aaee Hai Shaam-e-gham, Shaam-e-gham Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi
Meri Qismat Men Hai Jo Tumhari Kami, Woh Kami Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi

Shama Ki  Ab Mujhay Kuch Zarurat Naheen, Naam Ko Bhi Shab-e-ghum Men Zulmat Nahi

Mera Har Dagh-e-dil Kam Nahee Chand Sey, Chandni Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi

Tu Ney Jo Gham Diay Woh Khushi Sey Liay, Tujh Ko Dekha Naheen Phir Bhi Sajday Kiay
Itna Mazboot Hai Jab Aqeeda Mera, Bandgi Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi

Zaraf Wala Koi Saamney Aaye To, Main Dekhoon Usay Zara Us Ko Apnaaye To
Meri Hamraaz Yeh Us Ka Humraaz Main, Be'kasi Meray Ghar Se Kahan Jaaye Gi

Jo Koi Bhi Teri Raah Men Mar Gaya, Apni Hasti Ko Woh Javidaan Kar Gaya
Main Shaheed-e-wafa Ho Gaya Hoon To Kaya, Zindagi Meray Ghar Sey Kahan Jaaye Gi 



تم اگر یوں ہی نظریں ملاتے رہے

مے کشی میرے گھر سے کہاں جائے گی

اور یہ سلسلہ مستقل ہو تو پھر

بے خودی میرے گھر سے کہاں جائے گی

اک زمانے کے بعد آئی ہے شامِ غم

شامِ غم میرے گھر سے کہاں جائے گی

میری قسمت میں ہے جو تمہاری کمی

وہ کمی میرے گھر سے کہاں جائے گی

شمع کی اب مجھے کچھ ضرورت نہیں

نام کو بھی شبِ غم میں ظلمت نہیں

میرا ہر داغِ دل کم نہیں چاند سے

چاندنی میرے گھر سے کہاں جائے گی

تو نے جو غم دیے وہ خوشی سے لیے

تجھ کو دیکھا نہیں پھر بھی سجدے کیے

اتنا مضبوط ہے جب عقیدہ میرا

بندگی میرے در سے کہاں جائے گی

ظرف والا کوئی سامنے آئے تو

میں بھی دیکھوں ذرا اس کو اپنائے تو

میری ہم راز یہ، اس کا ہم راز میں

بے کسی میرے گھر سے کہاں جائے گی

جو کوئی بھی تیری راہ میں مر گیا

اپنی ہستی کو وہ جاوداں کر گیا

میں شہیدِ وفا ہو گیا ہوں تو کیا

زندگی میرے گھر سے کہاں جائے گی

ڈھونڈوگے اگر ملکوں ملکوں ۔ ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم



ڈھونڈوگے اگر ملکوں ملکوں ۔ ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
تعبیر ہے جس کی حسرت و غم ۔ اے ہم نفسو وہ خواب ہیں ہم

میں حیرت و حسرت کا مارا خاموش کھڑا ہوں ساحل پر
دریائے محبت کہتا ہے آ کچھ بھی نہیں پایاب ہیں ہم

اے درد بتا کچھ تو ہی پتہ ۔ اب تک یہ معمہ حل نہ ہوا
ہم میں ہے دل بے تاب نہاں یا آپ دل بےتاب ہیں ہم

لاکھوں ہی مسافر چلتے ہیں، منزل پہ پہنچتے ہیں دو ایک
اے اہل زمانہ قدر کرو نایاب نہ ہوں کمیاب ہیں ہم

مرغان قفس کو پھولوں نے اے شاد یہ کہلا بھیجا ہے
آجاو! جو تم کو آنا ہو ایسے میں ابھی شاداب ہیں ہم

وہ کہانیاں ادھوری جو نہ ہو سکیں گی پوری



انہی خوش گمانیوں میں کہیں جاں سے بھی نہ جاؤ
وہ جو چارہ گر نہیں ہے اسے زخم کیوں دکھاؤ

یہ اداسیوں کے موسم یونہی رائیگاں نہ جائیں
کسی یاد کو پکارو کسی درد کو جگاؤ

وہ کہانیاں ادھوری جو نہ ہو سکیں گی پوری
انہیں میں بھی کیوں سناؤں انہیں تم بھی کیوں سناؤ

یہ جدائیوں کے رستے بڑی دور تک گئے ہیں
جو گیا وہ پھر نہ آیا مری بات مان جاؤ

کسی بے وفا کی خاطر یہ جنوں فراز کب تک
جو تمہیں بھلا چکا ہے اسے تم بھی بھول جاؤ

Tuesday, 28 August 2012

آنکھوں میں لگ گئی ہے جھڑی تیری یاد سے



یہ رات ختم ہو کہ مری ذات ختم ہو
آ جائے نیند، درد کی برسات ختم ہو

کیسے گُزرتے ہیں مرے دن رات بِن ترے
اِظہار کرنے بیٹھوں تو نہ بات ختم ہو

آنکھوں میں لگ گئی ہے جھڑی تیری یاد سے
مِلنے چلے بھی آؤ کہ برسات ختم ہو

اِک روز آفتاب بھی ایسے غروب ہو
جاناں ترے وصال کی نہ رات ختم ہو

ایسا بھی کیا کہ عُمر سے لمبی جُدائی ہو
ایسا بھی کیا کہ پَل میں مُلاقات ختم ہو

ہو چکا ختم عہدِ ہجر و وصال



ہمتِ التجا نہیں باقی
ضبط کا حوصلہ نہیں باقی
اک تری دید چھن گئی مجھ سے
ورنہ دنیا میں کیا نہیں باقی
اپنے مشقِ ستم سے ہاتھ نہ کھینچ
میں نہیں یا وفا نہیں باقی
ترے چشمِ عالم نواز کی خیر
دل میں کوئی گلہ نہیں باقی
ہو چکا ختم عہدِ ہجر و وصال
زندگی میں مزا نہیں باقی

ملیں پھر آکے اسی موڑ پر دعا کرنا




ملیں پھر آکے اسی موڑ پر دعا کرنا 
کڑا ہے اب کے ہمارا سفر دعا کرنا 
دیارِ خواب کی گلیوں کا جو بھی نقشہ ہو 
مکینِ شہر نہ بدلیں نظر دعا کرنا 
چراغ جاں پہ اس آندھی میں خیریت گزرے 
کوئی امید نہیں ہے مگر دعا کرنا 
تمہارے بعد مرے زخمِ نارسائی کو 
نہ ہو نصیب کوئی چارہ گر دعا کرنا 
مسافتوں میں نہ آزار جی کو لگ جائے 
مزاج داں نہ ملیں ہم سفر دعا کرنا 
دکھوں کی دھوپ میں دامن کشا ملیں سائے 
ہر ے رہیں یہ طب کے شجر دعا کرنا 
نشاطِ قرب میں آئی ہے ایسی نیند مجھے 
کھلے نہ آنکھ میری عمر بھی دعا کرنا 
کڑا ہے اب کے ہمارا سفر دعا کرنا 
دیارِ خواب کی گلیوں کا جو بھی نقشہ ہو 
مکینِ شہر نہ بدلیں نظر دعا کرنا 
چراغ جاں پہ اس آندھی میں خیریت گزرے 
کوئی امید نہیں ہے مگر دعا کرنا 
تمہارے بعد مرے زخمِ نارسائی کو 
نہ ہو نصیب کوئی چارہ گر دعا کرنا 
مسافتوں میں نہ آزار جی کو لگ جائے 
مزاج داں نہ ملیں ہم سفر دعا کرنا 
دکھوں کی دھوپ میں دامن کشا ملیں سائے 
ہر ے رہیں یہ طب کے شجر دعا کرنا 
نشاطِ قرب میں آئی ہے ایسی نیند مجھے 
کھلے نہ آنکھ میری عمر بھر دعا کرنا

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets