Monday, 17 December 2012

التجا بے اثر، چشم ِتر رائیگاں


التجا بے اثر، چشم ِتر رائیگاں
یہ جبیں رائیگاں، سنگِ در رائیگاں

نہ سخن معتبر، نہ نظر دل نشین
اب تیرے روبرو سب ہنر رائیگاں

وہ تو نقش ِقدم ساتھ ہی لے گیا
کیا خبر تھی رہے گا سفر رائیگاں

خواب دونوں کے محروم ِتعبیر ہیں
ہم اِدھر رائیگاں وہ اُدھر رائیگاں

زیست کرنے کی اب کوئی صورت نہیں
ضبطِ غم رائیگاں، سر بسر رائیگاں

ہم سے رسم ِوفا ہو گی معتبر
کیا کہیں کیوں رہے عمر بھر رائیگاں


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets