Wednesday, 25 September 2013

میرے دل کے ٹوٹنے پر ہے کسی کو ناز کیا کیا


یہ  تیرا جمالِ کاکُل یہ شباب کا زمانہ
دل دشمناں سلامت دلِ دوستاں نشانہ

میری زندگی تو گزری تیرے ہجر کے سہارے
میری موت کو بھی پیارے کوئی چاہیئے بہانہ

میں وہ صاف ہی نہ کہہ دوں جو ہے فرق تجھ میں مجھ میں
تیرا درد، دردِ تنہا میرا غم، غمِ زمانہ

میرے دل کے ٹوٹنے پر ہے کسی کو ناز کیا کیا
مجھے اے “جگر” مبارک  یہ شکستِ فاتحانہ
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets